Sports

ہندوستان کا ورلڈ کپ سیمی فائنل تک کا سفر

86views

لگاتار 9 میچ جیتے، 6 مختلف کھلاڑی پلیئر آف دی میچ رہے

ٹیم انڈیا نے ون ڈے ورلڈ کپ 2023 میں لیگ مرحلے میں اپنے تمام 9 میچ جیتے۔ اتوار کو دیوالی کے مبارک موقع پر ٹیم نے ہالینڈ کو شکست دے کر لیگ مرحلے کا اختتام کیا۔ پہلے میچ میں آسٹریلیا کو 6 وکٹوں سے شکست دینے کے بعد بھارت نے آخری میچ میں ہالینڈ کو 160 رنز سے شکست دی تھی۔ 9 میچوں میں بھارت کے 6 مختلف کھلاڑی پلیئر آف دی میچ رہے، یعنی ٹیم کے یک طرفہ غلبے کو کسی ایک کھلاڑی نے نہیں بلکہ پوری ٹیم نے سپورٹ کیا۔ ہندوستان اب 15 نومبر کو سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ سے ٹکرائے گا۔ یہ میچ ممبئی کے وانکھیڑے اسٹیڈیم میں دوپہر 2 بجے سے کھیلا جائے گا۔ یہ دونوں ٹیمیں 2019 کے سیمی فائنل میں بھی ٹکرائی تھیں، جب نیوزی لینڈ نے بھارت کو 18 رنز سے شکست دے کر فائنل سے باہر کردیا تھا۔

ٹیم انڈیا نے 1975 کے بعد سے کھیلے جانے والے ون ڈے ورلڈ کپ میں ہر بار حصہ لیا ہے۔ لیکن 48 سال پرانے ٹورنامنٹ میں پہلی بار ہندوستان نے ایک ایڈیشن میں لگاتار 9 میچ جیتے ہیں۔ اس سے قبل 2003 میں بھارت نے لگاتار 8 میچ جیتے تھے، پھر ٹیم کو گروپ مرحلے اور فائنل میں آسٹریلیا کے ہاتھوں شکست ہوئی تھی۔ 2003 میں، ٹیم انڈیا نے کل 9 میچ جیتے، جو ایک ہی ایڈیشن میں ہندوستان کی طرف سے سب سے زیادہ جیت کا ریکارڈ تھا۔ بھارت نے اپنے ہی میزبان ورلڈ کپ میں یہ ریکارڈ بھی برابر کیا۔ ٹیم 1983 اور 2011 میں دو بار ورلڈ کپ بھی جیت چکی ہے، دونوں بار ہندوستان نے صرف 6 اور 7 میچ جیتے ہیں۔

پہلا میچ: آسٹریلیا کے خلاف 2 رنز پر 3 وکٹیں گنوا دیں۔

ہندوستان نے 8 اکتوبر کو چنئی کے چیپاک اسٹیڈیم میں آسٹریلیا کے خلاف اپنی ورلڈ کپ مہم کا آغاز کیا۔ ٹیم نے پہلے بولنگ کرتے ہوئے کینگروز کو 199 رنز پر آل آؤٹ کیا۔ رویندرا جدیجا نے 3 جبکہ جسپریت بمراہ اور کلدیپ یادیو نے 2-2 وکٹیں حاصل کیں۔ 200 رنز کے ہدف کے سامنے بھارت نے 2 رنز پر 3 وکٹیں گنوا دیں۔ روہت شرما، ایشان کشن اور شریاس آئر اپنا کھاتہ بھی نہیں کھول سکے۔ یہاں ویرات کوہلی نے وکٹ کیپر کے ایل راہول کے ساتھ 165 رنز کی شراکت داری کی اور ٹیم کو فتح کے قریب لے گئے۔ کوہلی نے 85 اور راہول نے 97 رنز بنائے اور ٹیم نے 42 ویں اوور میں 6 وکٹوں سے فتح حاصل کی۔

دوسرا میچ: افغانستان نے 273 رنز کا ہدف دیا

11 نومبر کو دہلی کے ارون جیٹلی اسٹیڈیم میں ہندوستان کا مقابلہ افغانستان سے ہوا۔ افغانستان نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 8 وکٹوں پر 272 رنز بنائے۔ حشمت اللہ شاہدی نے 80 اور عظمت اللہ عمرزئی نے 62 رنز بنائے۔ بھارت کی جانب سے جسپریت بمراہ نے 4 جبکہ ہاردک پانڈیا نے 2 وکٹیں حاصل کیں۔ بھارت کو 273 رنز کے ہدف کے سامنے کپتان روہت شرما اور ایشان کشن نے تیز شروعات دی۔ دونوں نے صرف 11 اوورز میں سنچری پارٹنرشپ بنائی۔ ایشان 47 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے، لیکن روہت نے 131 رنز کی اننگز کھیل کر ٹیم کو فتح کے قریب پہنچا دیا۔ آخر میں کوہلی نے 55 اور شریاس نے 25 رنز بنائے اور ٹیم 8 وکٹوں سے جیت گئی۔

تیسرا میچ: بابر کی ففٹی، رضوان کے ساتھ 82 رنز جوڑے

14 اکتوبر کو احمد آباد کے نریندر مودی اسٹیڈیم میں بھارت کا روایتی حریف پاکستان سے مقابلہ ہوا۔ پاکستان نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے صرف 2 وکٹوں پر 155 رنز بنائے۔ کپتان بابر اعظم نے ففٹی اسکور کی اور وکٹ کیپر محمد رضوان کے ساتھ 82 رنز کی شراکت قائم کی۔ یہاں محمد سراج نے بابر کو بولڈ کر کے پاکستان کو بیک فٹ پر دھکیل دیا۔ ٹیم یہاں سے صرف 36 رنز بنا سکی اور باقی وکٹیں گنوا دیں۔ جسپریت بمراہ نے صرف 19 رنز دے کر 2 وکٹیں حاصل کیں۔ 192 رنز کے ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے بھارت تیسرے ہی اوور میں شبمن گل کی وکٹ گنوا بیٹھا۔ کپتان روہت لگاتار دوسرے میچ میں ایک سرے پر کھڑے رہے، انہوں نے کوہلی کے ساتھ ففٹی کی شراکت داری کی۔ کوہلی صرف 16 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے، لیکن روہت یہیں بھی نہیں رکے۔ انہوں نے 86 رنز بنائے اور ٹیم کا سکور 156 تک پہنچا دیا۔ آخر میں شریاس نے 53 اور راہول نے 19 رنز بنا کر ہندوستان کو آسان فتح دلائی۔

چوتھا میچ: کوہلی نے 8 سال بعد ورلڈ کپ میں سنچری بنائی

پونے کے ایم سی اے اسٹیڈیم میں 19 نومبر کو ہندوستان کا مقابلہ بنگلہ دیش سے ہوا۔ بنگلہ دیش نے پہلے بیٹنگ کی اور ان کے دونوں اوپنرز نے نصف سنچریاں بنا کر ٹیم کو مضبوط آغاز فراہم کیا۔ ابتدائی اوورز کے بعد کلدیپ یادیو اور رویندرا جدیجا نے مل کر 3 وکٹیں حاصل کیں اور ہندوستان کی واپسی کی۔ اسی میچ میں ہاردک پانڈیا بھی بولنگ کرتے ہوئے زخمی ہو گئے تھے جو ٹورنامنٹ میں واپس نہیں آ سکے۔ باؤلرز نے ڈیتھ اوورز میں اچھی گیند بازی کی اور بنگلہ دیش کو صرف 256 رنز ہی بنانے دیا۔ 257 رنز کے ہدف میں روہت اور شبمن نے 88 رنز کی شراکت داری کرکے ٹیم انڈیا کو اچھی شروعات دلائی۔ روہت 48 رنز بنانے کے بعد اور شبمن 53 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے۔ ان کے بعد شریاس بھی صرف 19 رنز بنا سکے۔ یہاں ویرات کوہلی نے ایک اینڈ پکڑا، انہوں نے آخر تک راہول کے ساتھ بلے بازی کی۔ کوہلی نے 103 رنز کی اننگز کھیل کر ٹیم کو 7 وکٹوں سے فتح دلائی۔ کوہلی نے اپنی آخری ورلڈ کپ سنچری 2015 میں پاکستان کے خلاف بنائی تھی، انہوں نے بنگلہ دیش کے خلاف سنچری بنا کر 8 سال بعد ٹورنامنٹ میں اپنی سنچری کی خشکی کا خاتمہ کیا۔

پانچواں میچ: ڈیرل مچل کی سنچری، کوہلی پھر رن کے تعاقب میں پھنس گئے

ٹیم انڈیا کا مقابلہ نیوزی لینڈ سے ہوا، جس نے 22 اکتوبر کو دھرم شالہ کے HPCA اسٹیڈیم میں 2019 کے سیمی فائنل میں انہیں شکست دی تھی۔ نیوزی لینڈ نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 273 رنز بنائے۔ ٹیم کی جانب سے ڈیرل مچل نے 130 رنز کی اننگز کھیلی، راچن رویندرا نے بھی 75 رنز بنائے۔ یہاں، فاسٹ بولر محمد شامی نے ٹورنامنٹ میں اپنا پہلا میچ کھیلتے ہوئے دونوں کو آؤٹ کیا اور اننگز میں 5 وکٹیں بھی حاصل کیں۔ 274 رنز کے ہدف کے سامنے اوپنرز نے ایک بار پھر عمدہ آغاز کیا اور 71 رنز کی شراکت قائم کی۔ روہت 46 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے اور شوبھمن 26 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے۔ ان کی وکٹ کے بعد، کوہلی ایک بار پھر رنز کے تعاقب میں رہے۔ انہوں نے ایک اینڈ تھام رکھا تھا، جب کہ ان کے سامنے شریاس 33، راہول 27 اور سوریہ کمار یادیو 2 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے۔ کوہلی پھر بھی ڈٹے رہے اور جڈیجہ کے ساتھ پچاس کی شراکت داری کی۔ کوہلی 95 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے، لیکن ٹیم کو فتح کے قریب لے گئے۔ بھارت نے 48ویں اوور میں 4 وکٹوں سے میچ جیت کر ٹورنامنٹ میں اپنا تسلط برقرار رکھا۔

چھٹا میچ: بھارت دفاعی چیمپئن کے خلاف صرف 229 رنز بنا سکا

29 اکتوبر کو لکھنؤ کے ایکنا اسٹیڈیم میں ہندوستان کا مقابلہ 2019 کے چیمپئن انگلینڈ سے ہوا۔ پہلے بلے بازی کرتے ہوئے ٹیم انڈیا 9 وکٹ پر 229 رن ہی بنا سکی۔ یہاں کپتان روہت نے مشکل پچ پر 87 رنز کی اہم اننگز کھیلی۔ ان کے علاوہ سوریہ کمار نے 49 اور راہول نے 39 رنز بنائے۔ گیند بازوں نے 230 رنز کے ہدف کے دفاع کے لیے اترنے والی ٹیم انڈیا کو شاندار آغاز فراہم کیا۔ 10 اوورز میں انگلینڈ کے 4 بلے باز پویلین پہنچ گئے اور ٹیم صرف 39 رنز بنا سکی۔ شامی نے 4 اور بمراہ نے 3 وکٹیں حاصل کیں۔ کلدیپ کو 2 اور جڈیجہ کو ایک کامیابی ملی۔ گیند بازوں کے زور پر بھارت نے انگلینڈ کو 129 رنز تک محدود کر کے میچ 100 رنز سے جیت لیا۔

ساتواں میچ: سری لنکا 55 رنز پر آل آؤٹ، بھارت 302 رنز سے جیت گیا۔

2 نومبر کو ٹیم انڈیا کا مقابلہ ایشیا کپ کی رنر اپ سری لنکا سے ممبئی کے وانکھیڑے اسٹیڈیم میں ہوا۔ ہندوستان پھر سے پہلے بیٹنگ کرنے آیا اور کپتان روہت صرف 4 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئے۔ لیکن شبمن نے 92 اور کوہلی نے 88 رنز بنا کر ہندوستان کو 200 کے قریب پہنچا دیا۔ آخر میں شریاس نے 82 رنز بنائے اور ٹیم نے 8 وکٹوں پر 357 رنز بنائے۔ اس بار ہندوستانی تیز گیند بازوں نے دہشت پیدا کی اور 14 رنز کے اندر 6 سری لنکن بلے بازوں کو پویلین بھیج دیا۔ بمراہ نے اننگز کی پہلی ہی گیند پر پتھم نسانکا کو ایل بی ویڈ کیا۔ یہاں سے محمد سراج نے 3 اور محمد شامی نے 5 وکٹیں لے کر سری لنکا کو صرف 55 رنز تک محدود کردیا۔ جدیجا کو بریک تھرو ملا اور ہندوستان نے یہ میچ 302 رنز کے مارجن سے جیت لیا۔

آٹھواں میچ: کوہلی کی 49ویں ون ڈے سنچری ان کی سالگرہ پر

ہندوستان کا مقابلہ ٹیبل ٹاپر جنوبی افریقہ سے 5 نومبر کو کولکتہ کے ایڈن گارڈنز اسٹیڈیم میں ہوا۔ ٹیم انڈیا نے لگاتار چوتھے میچ میں پہلے بلے بازی کی۔ یہاں روہت اور گل نے تیز شروعات کی اور ٹیم کے اسکور کو صرف 10 اوور میں 91 رنز تک پہنچا دیا۔ روہت نے 40 اور شبمن نے 23 رنز بنائے۔ شام تک پچ پر اسپن نظر آنے لگا۔ یہاں کوہلی اور شریاس نے محتاط انداز میں بلے بازی کی، دونوں نے 134 رنز کی شراکت قائم کی۔ شریاس 77 رنز بنانے کے بعد آؤٹ ہوئے تاہم کوہلی ڈٹے رہے، انہوں نے 101 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی اور ٹیم کے اسکور کو 326 رنز تک لے گئے۔ 5 نومبر کو، کوہلی نے اپنی 35ویں سالگرہ منائی اور اپنی 49ویں ون ڈے سنچری بنا کر سچن ٹنڈولکر کی 49 سنچریوں کی برابری کی۔ 327 رنز کے ہدف کا دفاع کرتے ہوئے تیز گیند بازوں نے ایک بار پھر شاندار آغاز کیا۔ 10 اوورز کے اندر 3 افریقی بلے باز پویلین لوٹ گئے اور ٹیم صرف 35 رنز بنا سکی۔ اس بار اسپنرز نے اپنا جادو دکھایا، رویندرا جدیجا نے 5 اور کلدیپ یادیو نے 2 وکٹیں حاصل کیں۔ شامی کے حصے سے 2 اور سراج کے حصے سے ایک کامیابی ملی، جب کہ بمراہ نے 5 اوورز میں صرف 14 رنز دیے۔ جنوبی افریقہ کی ٹیم صرف 83 رنز بنا سکی اور بھارت نے یہ میچ 243 رنز کے بڑے مارجن سے جیت لیا۔

نواں میچ: ٹاپ 5 گیند بازوں نے 50+ سکور کا ریکارڈ بنایا، بھارت نے 400 کو پار کر لیا

12 نومبر کو، میزبان بھارت کا مقابلہ بنگلورو کے ایم چناسوامی اسٹیڈیم میں نیدرلینڈز سے ہوا۔ کپتان روہت نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کا انتخاب کیا اور ٹیم کے جارحانہ انداز کی قیادت بھی کی۔ روہت نے 61 اور شوبھمن نے 51 رنز بنائے، دونوں نے صرف 11.5 اوور میں 100 رنز کی شراکت قائم کی۔ اس کے بعد کوہلی نے بھی 51 رنز بنائے۔ چوتھے نمبر پر آنے والے شریاس نے 128 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی اور راہول کے ساتھ 208 رنز کی شراکت بھی کی۔ راہول نے 102 رنز بنائے اور بھارت نے 4 وکٹوں پر 410 رنز بنائے۔ ورلڈ کپ میں پہلی بار کسی ٹیم کے ٹاپ 5 کھلاڑیوں نے 50 سے زیادہ رنز بنائے۔ ڈچ کھلاڑیوں نے 411 رنز کے بڑے ہدف کا ڈٹ کر مقابلہ کیا، ٹیم کے 4 کھلاڑیوں نے 30 سے ​​زائد رنز بنائے۔ ٹیم نے 47.5 اوورز تک بیٹنگ کی لیکن 411 رنز کا سکور ان کے لیے بہت بڑا ہو گیا۔ ڈچ ٹیم 250 رنز بنانے کے بعد آل آؤٹ ہوگئی اور 160 رنز سے میچ ہار گئی۔ بھارت کی جانب سے بمراہ، سراج، کلدیپ اور جدیجا نے 2-2 وکٹیں حاصل کیں۔ وہیں کوہلی اور روہت کو بھی ایک ایک کامیابی ملی۔ بھارت نے اس میچ میں 9 گیند بازوں کو آزمایا، محمد شامی کے علاوہ سوریہ کمار اور شبمن نے بھی بولنگ کی۔

شامی کے نام 16 وکٹیں، 5 گیند بازوں نے 12+ وکٹیں حاصل کیں۔

جسپریت بمراہ ایک بار پھر آئی سی سی ٹورنامنٹ میں ہندوستان کے باؤلنگ اٹیک کے رہنما تھے۔ انہوں نے 9 میچوں میں ٹیم کے لیے سب سے زیادہ 17 وکٹیں حاصل کیں۔ ان کے بعد لیفٹ آرم اسپنر رویندر جڈیجہ اور تیز گیند باز محمد شامی نے 16،16 وکٹیں حاصل کیں۔ ان کے علاوہ کلدیپ یادو نے بھی 14 اور محمد سراج نے بھی 12 وکٹیں حاصل کی ہیں۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.