International

غزہ میں امریکہ نے پیراشوٹ سے کھانے کے پیکٹ گرائے، 22 لاکھ لوگ بھکمری کے دہانے پر!

51views

غزہ پر اسرائیل کی وحشیانہ بمباری کے بعد امریکہ نے پہلی بار غزہ کے لوگوں کو مدد پہنچائی ہے اور یہ مدد کھانوں کے پیکٹ کے طور پر ہے۔ یہ پیکٹ امریکی فوجی طیاروں کے ذریعے سمندر کے قریب بنے امدادی پوائنٹ کے پاس گرائے گئے۔ واضح رہے کہ اقوامِ متحدہ کا کہنا ہے کہ غزہ میں 22 لاکھ سے زائد آبادی زبردست غذائی قلت کی شکار ہے۔

تلنگانہ حکومت 11 مارچ سے ’اِندرامّا ہاؤسنگ اسکیم‘ کا آغاز کرے گی

’نیویارک ٹائمز‘ کے مطابق امریکہ نے 66 ڈبوں میں 38 ہزار کھانے کے پیکٹ گرائے ہیں۔ امریکہ کا کہنا ہے کہ یہ صرف شروعات ہے اور وہ مستقبل میں بھی غزہ میں فلسطینیوں کی مدد کرتا رہے گا۔ کھانے کے پیکٹ گرانے کا یہ ایک مشترکہ آپریشن تھا جس میں امریکی فوج کے ساتھ اردن کی فوج بھی شامل تھی۔ یہاں یہ بات بھی ملحوظ رہے کہ امریکہ کی جانب سے جہاں کھانے کے یہ پیکٹ گرائے گئے ہیں وہاں پر یکم مارچ کو کھانا لینے کے لیے جمع ہوئے  فلسطینیوں پر اسرائیلی فوجیوں نے فائرنگ کر دی تھی جس میں 112 فلسطینی جاں بحق ہو گئے تھے۔ اس واقعے کی تصاویروویڈیوز سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھیں۔

کیا کچھ چل رہا ہے ممتا اور وزیر اعظم کے درمیان، بی جے پی رہنما بے چین!

یکم مارچ کو امدادی پوائنٹ پر اسرائیلی فوجیوں کی وحشیانہ فائرنگ میں جاں بحق ہونے والوں کو اسی ٹرک کے ذریعے اسپتال پہنچایا گیا تھا جس میں امدادی سامان آیا تھا۔ غزہ میں اسرائیل کے حملے سے اب اب تک 24 ہسپتال اور 123 ایمبولینسیں تباہ ہو چکے ہیں، اس لیے ہلاک و زخمی ہونے والوں کو گھوڑا گاڑیوں اور ٹرکوں کے ذریعے اسپتال پہنچایا گیا تھا۔ واضح رہے کہ اس جنگ میں اب تک 30 ہزار سے زائد فلسطینی مارے جا چکے ہیں۔

Follow us on Google News