JharkhandRanchi

اے ایچ رضوی مر حوم کے نام پر ہر سال ایوارڈ دیاجانا چا ہئیے

162views

معروف اردو صحافی سابق مقامی ایڈیٹر سید امیر حسین رضوی کی یاد میں تعزیتی اجلاس

جد ید بھارت نیوز سروس
رانچی6 نومبر:: اردو کے مشہور صحافی، قو می تنظیم کے سابق مقامی ایڈیٹر سید امیر حسین رضوی کی یاد میں پیر 6 نومبر 2023 کو مسجد جعفریہ کیمپس میں ایک تعزیتی اجلاس کا انعقاد کیا گیا۔ جس کی صدارت مولانا سید تہذیب الحسن رضوی صدر آل انڈیا شیعہ پرسنل لابورڈ جھارکھنڈ نے کی اور نظامت نوجوان شاعر سہیل سعید نے کی۔ جھارکھنڈ کے سب سے سینئراردو صحافی خورشید پرویز صدیقی نے انہیں یاد کرتے ہوئے کہا کہ رضوی صاحب میرے دوست تھے۔ یہ بہت افسوسناک ہے کہ اردو معاشرہ اب زندہ اور مردہ کو یاد کرنے کی روایت ختم کرتا جا رہا ہے۔ رضوی صاحب کو بھلایا نہیں جا سکتا۔ اپنی دلچسپی کا اظہار کرتے ہوئے کانگریس کے سینئرلیڈر اجے ناتھ شاہ دیو نے کہا کہ رضوی صاحب کا جانا سماج اور ریاست کے لیے ایک نقصان ہے۔ ہم ان کے خاندان سے ان کے نام پر ایوارڈ کا اعلان کرنا چاہتے ہیں۔ تاکہ اس بہانے انہیں یاد کیا جا سکے۔ پروفیسر ہرویندر ویر سنگھ نے کہا کہ رضوی صاحب نے اپنی پوری زندگی صحافت کے لیے قربان کردی۔ اردو زبان میں اخبار کی اشاعت بہت مشکل کام ہے۔ ہم رضوی صاحب کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔

اس دوران جھارکھنڈ اقلیتی کمیشن کے وائس چیئرمین کانگریس لیڈر شمشیر عالم نے کہا کہ یہ میری خوش قسمتی ہے کہ ہم رضوی صاحب کے بہت قریب تھے۔ رضوی صاحب ہمیشہ مجھے اپنے اچھے مشورے دیتے ہیں۔ رضوی صاحب ایک نڈر صحافی تھے جو اب ہم میں نہیں رہے۔ ہمیں یاد ہے رضوی صاحب، خورشید پرویز صدیقی، مظفر حسن اور ایسے لوگوں نے اردو کے لیے جدوجہد کی اور مدھو کوڑا حکومت نے اردو کو دوسری زبان کا درجہ دیا۔ وہیں شری مہاویر منڈل کے صدر جئے سنگھ یادو نے کہا کہ رضوی صاحب قو می یک جہتی کیلئے کام کرتے تھے۔ 1990/92 میں جب پورا ملک جل رہا تھا۔ اس دوران رضوی صاحب نے فرقہ وارانہ ہم آہنگی پیدا کرنے کا کام کیا۔ اور لوگوں کو جوڑ کر فرقہ وارانہ ہم آہنگی پیدا کی۔ رضاکار تنظیملوک سیوا سمیتی کے چیئرمین نوشاد خان نے انہیں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ رضوی صاحب ایک نیک اور سچے انسان تھے۔ ہم اعلان کرتے ہیں کہ جھارکھنڈ کا اعلیٰ ترین شہری اعزاز جھارکھنڈ رتنا رضوی صاحب کے خاندان کو بعد از مرگ دیا جائے گا۔ جھارکھنڈ کے سینئرصحافی مظفر حسن نے کہا کہ صحافیوں کا کام پیار بانٹنا ہے۔ رضوی صاحب نے اردو اخبار کے لیے بہت محنت کی ہے۔ رضوی صاحب وہ شخصیت تھے جنہوں نے اردو کو گھر گھر تک پہنچانے کی سعی کی۔ نوجوانوں کو جوڑنے کا کام کیا۔ ہم مختلف اخبارات میں کام کرتے وقت بھی دوستانہ رہے۔ لیکن رضوی صاحب کو 40/50 سال اخبار کی خدمت کے بعد کیا ملا وہ الگ بات ہے۔ سینئرصحافی وکیل احمد رضوی نے کہا کہ 1978/80 سے رضوی صاحب سے ہمارے تعلقات رہے۔ وہ صحافی ہونے کے ساتھ ساتھ ایک اچھے شاعر بھی تھے۔ سینئرصحافی مستقیم عالم نے کہا کہ رضوی صاحب بہت رحم دل انسان تھے۔ دریں اثنا، سرودھرم سدبھاونا سمیتی کے چیئرمین محمد اسلام نے کہا کہ رضوی صاحب دنیا میں قلم کے بے تاج بادشاہ تھے۔ صدارت کرتے ہوئے حضرت مولانا سید ت تہذ یب الحسن رضوی نے انہیں یاد کرتے ہوئے فرمایا کہ ہمیشہ دوسروں کے کام آنے والی شخصیت کا نام امیر حسین رضوی ہے۔ وہ قوم و ملت کے بارے میں سوچتے تھے۔ ان کی ہمیشہ یہ کوشش رہتی تھی کہ کلمہ پڑھنے والاہر مسلمان ایک چٹائی پر آجائے۔ اس تعزیتی اجلاس میں مولانا تہذیب الحسن رضوی، جئے سنگھ یادو، اجے ناتھ شاہدو، خورشید پرویز صدیقی، پروفیسر ہرویندر ویر سنگھ، مظفر حسن، وکیل احمد رضوی، مستقیم عالم، خورشید حسن رومی، شارب خان، ایس ایم ایس خاں، اور دیگر نے شرکت کی۔ ، نوشاد خان، محمد اسلام، نفیس العابدین، سید شہروز قمر، تنویر خان، اختر انصاری،سید ظفر فا طمی، امین احمد، عبدالمنان، عبدالخالق، سیف الحق، سید نہال احمد، اقبال فاطمی، نہال حسین سریاوی ، غلام شاہد، پرویز قریشی۔ ، نوشاد عالم، ایس ایم ایس آصف، اسفر، نسیم، نقی رضوی، ابوذر غفاری، عادل رشید، گڈو، اور بہت سے لوگ موجود تھے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.