National

’حکومت ہند نے کچھ مخصوص اکاؤنٹس اور پوسٹس ہٹانے کے لیے کہا‘، سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’ایکس‘ کا حیرت انگیز دعویٰ

45views

حکومت ہند نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’ایکس‘ (پرانا نام ٹوئٹر) سے کچھ اکاؤنٹس اور پوسٹس ہٹانے کے لیے کہا ہے۔ ایکس نے یہ حیرت انگیز دعویٰ اپنے گلوبل گورننس افیئرز اکاؤنٹ کے ذریعے کیا ہے۔ ساتھ ہی اس کا کہنا ہے کہ ہم اس فیصلے سے متفق نہیں ہیں۔ یہ پوسٹس اور اکاؤنٹس صرف ہندوستان میں نظر نہیں آئیں گے۔

قابل اعتراض فتویٰ! سہارنپور پولیس کو دارالعلوم دیوبند کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کی ہدایت

ایکس کے گلوبل گورننس افیئرز نے پوسٹ کیا ہے کہ حکومت ہند نے ایک ایگزیکٹو آرڈر جاری کرتے ہوئے کہا کہ ایکس کچھ اکاؤنٹس اور پوسٹس پر کارروائی کرے، جو جرمانے اور قید سمیت ممکنہ سزا سے مشروط تھا۔ ایکس کے مطابق اسے مخصوص اکاؤنٹس اور پوسٹس پر کارروائی کرنے کے لیے ایگزیکٹو آرڈرز موصول ہوئے ہیں، اور اس کی تعمیل نہ کرنے کی صورت میں بتایا گیا کہ جرمانے اور قید کی سزا ہو سکتی ہے۔

The Indian government has issued executive orders requiring X to act on specific accounts and posts, subject to potential penalties including significant fines and imprisonment. 

In compliance with the orders, we will withhold these accounts and posts in India alone; however,…

— Global Government Affairs (@GlobalAffairs) February 21, 2024

ان الزامات سے مرکزی حکومت اور ایکس کے درمیان تنازعہ بڑھ سکتا ہے۔ ایکس کے گلوبل گورننس افیئرز نے پوسٹ میں کہا کہ آرڈر کے تحت ہمیں ہندوستان میں ایسے اکاؤنٹس اور پوسٹس کو بند کرنا ہے۔ حالانکہ ہم ان اقدامات سے متفق نہیں ہیں اور سمجھتے ہیں کہ ان پوسٹوں کے لیے اظہار رائے کی آزادی کا بھی احترام کیا جانا چاہیے۔ آزادی اظہار کا حوالہ دیتے ہوئے ایکس نے لکھا ہے کہ مرکزی حکومت کے حکم پر عمل کرتے ہوئے کمپنی صرف ہندوستان میں ان اکاؤنٹس اور پوسٹس کو بلاک کرے گی۔ ہم نے اپنی پالیسیوں کے مطابق متاثر ہونے والے صارفین کو ان کارروائیوں سے آگاہ کر دیا ہے۔

سرکاری ایجنسیاں ’تاناشاہ‘ کے اشارے پر مار رہیں چھاپہ، کسان کا بیٹا ہوں، گھبراؤں گا نہیں! ستیہ پال ملک کا بیان

گلوبل گورننس افیئرز نے لکھا ہے کہ قانونی پابندیوں کی وجہ سے ہم حکومتی احکامات کو شائع کرنے سے قاصر ہیں لیکن ہمارا ماننا ہے کہ شفافیت کی خاطر انہیں عام کرنا ضروری ہے۔ وضاحت نہ کرنے کے نتیجے میں جوابدہی میں کمی آ سکتی ہے۔ واضح رہے کہ یہ پہلا موقع نہیں ہے جب ایکس نے حکومت پر اس طرح کے الزامات عائد کیے ہیں۔ 2021 میں بھی اس نے کہا تھا کہ حکومت ہند اظہار رائے کی آزادی کے خلاف ہے۔

Follow us on Google News