National

’آئین ختم ہو گیا تو ہندوستان کو 22 ارب پتی چلائیں گے‘، اڈیشہ میں راہل گاندھی نے جلسۂ عام سے کیا خطاب

82views

بولنگیر: کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی آج اڈیشہ میں انتخابی تشہیر کے دوران مرکز کی مودی حکومت پر زوردار انداز میں حملہ آور دکھائی دیے۔ انھوں نے ایک جلسۂ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’ہندوستان کیع وام کو جو کچھ بھی ملا ہے، وہ آئین نے دیا ہے۔ بی جے پی لیڈران کہتے ہیں کہ وہ آئین کو ختم کر دیں گے۔ اس انتخاب میں سب سے بڑی بات آئین کو بچانے کی ہے۔ اگر آئین ختم ہو گیا تو عوام کے حق ختم ہو جائیں گے، ریزرویشن ختم ہو جائے گا، پورے پبلک سیکٹر کی نجکاری ہو جائے گی اور ہندوستان کو 22 ارب پتی چلائیں گے۔‘‘

हिंदुस्तान के संविधान को दुनिया की कोई ताकत खत्म नहीं कर सकती।

बोलंगीर, ओडिशा pic.twitter.com/2wSKnJxHp3

— Congress (@INCIndia) May 15, 2024

اڈیشہ کے بولنگیر میں انتخابی جلسہ سے خطاب کے دوران راہل گاندھی نے مودی حکومت کو کھرب پتیوں کے مفاد میں کام کرنے والی حکومت قرار دیا۔ انھوں نے کہا کہ ’’مودی حکومت نے پبلک سیکٹر کو سرمایہ داروں کے ہاتھوں فروخت کر دیا۔ انھوں نے پورا کا پورا کام 22 ارب پتیوں کے لیے کیا۔ عوام کے لیے کچھ بھی نہیں کیا۔ یہ حکومت عوام کے لیے نہیں بلکہ 25-22 لوگوں کے لیے کام کرتی ہے۔‘‘

नरेंद्र मोदी ने देश के अरबपतियों का 16 लाख करोड़ रुपए माफ किया है।

इन्होंने 24 साल के मनरेगा का पैसा 22 लोगों को दे दिया है, लेकिन आम जनता को कुछ नहीं दिया।

मोदी सरकार ने किसानों का कर्ज माफ नहीं किया, छात्रों का लोन माफ नहीं किया, छोटे व्यापारियों को तो लोन ही नहीं दिया।

आज… pic.twitter.com/2YxVzgTZuA

— Congress (@INCIndia) May 15, 2024

لوک سبھا اور اسمبلی انتخاب میں عوام سے کانگریس امیدواروں کو کامیاب بنانے کی اپیل کرتے ہوئے راہل گاندھی نے کہا کہ نریندر مودی نے ملک کے ارب پتیوں کا 16 لاکھ کروڑ روپے معاف کر دیا ہے۔ انھوں نے 24 سال کے منریگا کا پیسہ 22 لوگوں کو دے دیا، لیکن عوام کو کچھ نہیں دیا۔ مودی حکومت نے سکانوں کا قرض معاف نہیں کیا، طلبا کا اسٹڈی لون معاف نہیں کیا، چھوٹے کاروباریوں کو تو قرض ہی نہیں دیا۔ آج عوام پر بہت بوجھ ہے، کیونکہ مودی حکومت نے کبھی عوام کی حفاظت نہیں کی۔

देश में 90% लोगों की कहीं भागीदारी नहीं है।

टीवी पर मीडिया वाले अंबानी की शादी दिखाएंगे, PM मोदी का वीडियो दिखाएंगे..

लेकिन किसान, मजदूर और बेरोजगार युवा की आवाज कभी नहीं दिखाएंगे।

क्योंकि मीडिया के मालिकों की लिस्ट में आपको दलित, आदिवासी या पिछ़ड़े वर्ग का एक व्यक्ति नहीं… pic.twitter.com/cK3XK3NwZC

— Congress (@INCIndia) May 15, 2024

اپنی تقریر کے دوران راہل گاندھی نے الیکٹرانک میڈیا کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا۔ انھوں نے کہا کہ ’’ٹی وی میڈیا والے امبانی کی شادی دکھائیں گے، مودی کی ویڈیو دکھائیں گے، لیکن کسان، مزدور اور بے روزگار نوجوانوں کی آواز کبھی نہیں دکھائیں گے۔ کیونکہ میڈیا کے مالکوں کی فہرست میں دلت، قبائلی یا پسماندہ طبقہ کا ایک شخص نہیں ملے گا۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ مرکز میں انڈیا اتحاد کی حکومت بننے کے بعد ذات پر مبنی مردم شماری کرائی جائے گی، جو حصہ داری یقینی بنانے کے لیے پہلا انقلابی قدم ہوگا۔ اس سے ملک کے ہر طبقہ کو اس کی حصہ داری پتہ چل جائے گی۔

हमारा पहला क्रांतिकारी कदम- जातिगत जनगणना है ।

जिससे देश के हर वर्ग को उसकी हिस्सेदारी पता चल जाएगी।

: @RahulGandhi जी

बोलंगीर, ओडिशा pic.twitter.com/kXLLadAUGG

— Congress (@INCIndia) May 15, 2024

مرکز میں انڈیا اتحاد کی حکومت بننے کی صورت میں کانگریس کے عزائم کو بیان کرتے ہوئے راہل گاندھی نے کہا کہ ہر غریب کنبہ کی ایک خاتون کے اکاؤنٹ میں ہر ماہ 8500 روپے دیے جائیں گے۔ اس طرح خواتین کو سالانہ ایک لاکھ روپے ملیں گے۔ نوجوانوں کے لیے اپرینٹس شپ پروگرام لایا جائے گا جس کے تحت نوجوانوں کو گریجویٹ و ڈپلوما مکمل کرتے ہی پہلے سال میں ایک لاکھ روپے ملیں گے۔ مرکز میں خالی پڑے 30 لاکھ عہدے بھرے جائیں گے۔ منریگا مزدوری 400 روپے کی جائے گی۔ ہندوستان کے کسانوں کا قرض معاف کیا جائے گا۔ ایم ایس پی کی قانونی گارنٹی دی جائے گی۔ انشورنس پالیسی میں تبدیلی کر فصل کا نقصان ہونے پر 30 دنوں کے اندر سیدھے بینک اکاؤنٹ میں ادائیگی یقینی بنائی جائے گی۔ اگنی ویر منصوبہ رد کیا جائے گا۔

कांग्रेस की गारंटी

✅ युवा न्याय

1.⁠ पहली नौकरी पक्की – हर शिक्षित युवा को 1 लाख रुपए की अप्रेंटिसशिप का अधिकार

2.⁠ ⁠भर्ती भरोसा – 30 लाख सरकारी नौकरियां, सभी खाली पोस्ट कैलेंडर के अनुसार भरेंगे

3.⁠ ⁠⁠पेपर लीक से मुक्ति – पेपर लीक रोकने के लिए नए कानून और नीतियां… pic.twitter.com/Ll6TrsmHNE

— Congress (@INCIndia) May 15, 2024

Follow us on Google News