National

کانگریس کے کھاتے منجمد ہونے پر کانگریس کا اظہار برہمی، کھڑگے، سونیا اور راہل کی پریس کانفرنس، کہا- ’جمہوریت کو منجمد کیا گیا!‘

54views

نئی دہلی: لوک سبھا انتخابات سے قبل کانگریس نے اہم پریس کانفرنس کی جس میں سونیا گاندھی، راہل گاندھی اور ملکارجن کھڑگے نے شرکت کی۔ پارٹی لیڈران نے کہا کہ الیکٹورل بانڈ کے ذریعے بی جے پی کو فائدہ پہنچایا گیا اور کانگریس کے بینک اکاؤنٹس جان بوجھ کر منجمد کیے گئے تاکہ وہ انتخابات میں مساوی مقابلہ نہ کر سکے۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے کہا کہ بینک کھاتوں کو منجمد نہیں کیا گیا بلکہ ہندوستان کی جمہوریت کو منجمد کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ وزیراعظم مودی اور وزیر داخلہ امت شاہ کی طرف سے ہمارے خلاف مجرمانہ کارروائی ہے۔ ایک مہینہ قبل کانگریس کے تمام اکاؤنٹس منجمد کر دیے گئے تھے۔ اگر کسی بھی خاندان کے اکاؤنٹس منجمد کر دیے جائیں تو وہ بھوک سے مر جائیں گے لیکن جب ہمارے اکاؤنٹس منجمد ہوئے تو کسی نے اف تک نہیں کی۔ الیکشن کمیشن سے لے کر سب نے خاموشی اختیار کر لی۔ بیس فیصد ہندوستان ہمارے لیے ووٹ دیتا ہے لیکن ہم کسی کام کے لیے روپے بھی ادا نہیں کر سکتے!

راہل گاندھی نے جیا کہ کانگریس پارٹی کے بینک اکاؤنٹس کو منجمد کر دیا گیا ہے۔ کسی بھی عدالت یا الیکشن کمیشن نے اس بارے میں کچھ نہیں کہا۔ یہاں کوئی جمہوریت موجود نہیں ہے۔

انہوں نے کہا، یہ کانگریس پارٹی کے ساتھ ہوا لیکن کسی ادارے نے، عدالت نے، الیکشن کمیشن نے، کسی نے بھی کچھ نہیں کہا۔ آج ہم ریلوے کی ٹکٹ نہیں خرید سکتے، ہم اپنے رہنماؤں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ نہیں بھیج سکتے۔ راہل گاندھی نے بتایا کہ مسئلہ سات سال پرانا ہے اور چودہ لاکھ روپے کا معاملہ ہے، جس کی وجہ سے کانگریس پارٹی کے تمام بینک اکاؤنٹس منجمد کر دیے گئے ہیں اور دو سو کروڑ روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا ہے۔

دریں اثنا، کانگریس کی سینئر لیڈر سونیا گاندھی نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم جمہوریت کو بچانے کی پوری کوشش کر رہے ہیں۔ انتخابی بانڈز سے بی جے پی کو کافی فائدہ ہوا ہے۔ وزیر اعظم کانگریس کو اپاہج کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ یہ بہت سنگین مسئلہ ہے، جمہوریت پر حملہ ہے۔

سونیا گاندھی نے کہا ہے کہ عوام سے اکٹھا کیا گیا چندہ روکا جا رہا ہے اور ہمارے اکاؤنٹس سے زبردستی رقم نکالی جا رہی ہے۔ اگر کانگریس انتخابی مہم میں خرچ نہیں کرتی تو پھر انتخابات کا کیا مقصد ہے؟ پچھلے مہینے سے ہم 285 کروڑ روپے کا استعمال نہیں کر پا رہے۔ اگر ہم کوئی کام نہیں کر سکتے تو جمہوریت کیسے باقی رہے گی؟ تاہم ان تمام چیلنجنگ حالات میں بھی ہم اپنی بہترین کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک جانب ‘الیکٹورل بانڈ’ کا معاملہ موجود ہے، جسے سپریم کورٹ نے غیر آئینی قرار دیا ہے۔ ان چناؤی بانڈز کی وجہ سے بی جے پی کو کافی اور وسیع پیمانے پر فائدہ پہنچا ہے۔ دوسری طرف، اہم حزب اختلاف، کانگریس کی مالی حالت پر مسلسل حملے کیے جا رہے ہیں۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے نے کہا کہ جمہوریت کے لیے منصفانہ انتخابات ضروری ہیں۔ ایسا نہیں ہونا چاہیے کہ اقتدار میں رہنے والوں کی وسائل پر اجارہ داری ہو، یہ نہیں ہونا چاہیے کہ میڈیا پر ان کی اجارہ داری ہو، ایسا نہیں ہونا چاہیے کہ حکمران جماعت آئی ٹی جیسے آئینی اور عدالتی اداروں پر بالواسطہ یا بلاواسطہ کنٹرول ہو۔ ، ای ڈی، الیکشن کمیشن۔

انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے حال ہی میں سپریم کورٹ کی مداخلت کے بعد الیکٹورل بانڈز کے حوالے سے جو حقائق سامنے آئے ہیں وہ تشویشناک اور شرمناک ہیں۔ اس سے ملک کی شبیہ کو نقصان پہنچا ہے۔ گزشتہ 70 سالوں میں ہمارے ملک میں منصفانہ انتخابات اور صحت مند جمہوریت کی جو تصویر بنائی گئی تھی اس پر سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔

کھڑگے نے کہا کہ الیکشن ڈونیشن بانڈ جسے سپریم کورٹ نے غیر قانونی اور غیر آئینی قرار دیا تھا، اس کے تحت موجودہ حکمراں جماعت نے اپنے کھاتے میں ہزاروں کروڑ روپے سے زائد کی رقم جمع کرا دی ہے، جب کہ دوسری طرف اہم اپوزیشن جماعت کے بینک اکاؤنٹس کو سازشی طور پر منجمد کر دیا گیا ہے تاکہ ہم نہ ہونے کی وجہ سے یکساں طور پر الیکشن نہیں لڑ سکیں۔ پیسہ حکمران جماعت کا یہ خطرناک کھیل ہے، اس کے بہت دور رس اثرات مرتب ہوں گے کیونکہ جمہوریت کو بچانا ہے تو برابری ہونی چاہیے۔

کھڑگے نے کہا کہ حکمران پارٹی کی طرف سے ایک خطرناک کھیل کھیلا جا رہا ہے۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ کسی بھی سیاسی جماعت کو بے بس کر کے الیکشن لڑنے میں رکاوٹیں کھڑی کر کے اسے منصفانہ الیکشن نہیں کہا جا سکتا۔ عام شہری دیکھ سکتے ہیں کہ انتخابی عطیہ بانڈز سے بی جے پی کو 56 فیصد رقم ملی ہے جبکہ کانگریس کو صرف 11 فیصد ملی ہے۔

اس دوران کانگریس لیڈر اجے ماکن نے کہا کہ کانگریس اپنی پارٹی فنڈز استعمال کرنے کے قابل نہیں ہے۔ ہم پبلسٹی کے لیے پیسہ خرچ کرنے سے قاصر ہیں۔ یہ کیسی جمہوریت ہے؟ ہمارے خلاف 30 سے ​​35 پرانے مقدمات کھول کر پیسے استعمال نہیں کرنے دے رہے ہیں۔

ماکن نے کہا کہ ہمارے پاس امیدواروں کو دینے کے لیے پیسے نہیں ہیں۔ ہمارے پاس الیکشن لڑنے کے پیسے نہیں ہیں۔ محکمہ انکم ٹیکس کی طرف سے کانگریس پارٹی کو جاری کیا گیا نیا نوٹس 1994-1995 سے متعلق ہے۔ یہ نوٹس 14 مارچ کو دیا گیا تھا۔ یہ نوٹس اس وقت کیوں جاری کیا گیا ہے، جبکہ یہ معاملہ 30 سال پرانا ہے۔

اجے ماکن نے کہا کہ ہر سیاسی جماعت کو ٹیکس سے استثنیٰ دیا گیا ہے۔ ایسے میں جب کانگریس پر انکم ٹیکس کے قوانین لاگو نہیں ہوتے تو پھر ہمیں کیوں نشانہ بنایا جا رہا ہے؟ ہم پر 100 فیصد سے زیادہ جرمانہ عائد کیا گیا ہے۔ محکمہ انکم ٹیکس کے اہلکاروں نے ہمارے بینک اکاؤنٹ سے زبردستی 115 کروڑ روپے بینکوں میں منتقل کر دیے ہیں۔ ہم پر 110 کروڑ روپے سے زیادہ کا جرمانہ عائد کیا گیا ہے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.