National

گھر کی ایک اینٹ لگانے میں برسوں لگتے ہیں؛ بلڈوزر من مانی کیلئے نہیں!

84views

الہ آباد ہائی کورٹ کا سخت تبصرہ

لکھنؤ، 9 نومبر:۔ (ایجنسی) الہ آباد ہائی کورٹ نے الہ آباد (پریاگ راج) کے جھونسی تھانہ علاقے میں رہنے والے ایک وکیل کے گھر کو منہدم کرنے کے معاملے میں سماعت کے دوران پریاگ راج ڈیولپمنٹ اتھارٹی (پی ڈی اے) کو پھٹکار لگائی۔ ایڈوکیٹ ابھیشیک یادو نے جھونسی علاقہ میں اپنے مکان کو گرائے جانے کے خلاف ہائی کورٹ میں عرضی داخل کی تھی۔ بدھ کو اس معاملے کی سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ نے سخت تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ بلڈوزر کی کارروائی من مانی کے لیے نہیں ہے۔ پریاگ راج ڈیولپمنٹ اتھارٹی (پی ڈی اے) کے وائس چیئرمین سے جواب طلب کرنے کے ساتھ ہی الہ آباد ہائی کورٹ نے پی ڈی اے حکام کو بھی پھٹکار لگائی ہے۔ ہائی کورٹ کا کہنا ہے کہ گھر کی ایک اینٹ لگانے میں کئی سال لگ جاتے ہیں اور حکام اسے توڑنے میں ایک لمحہ بھی ضائع نہیں کرتے۔ ایسے میں ہائی کورٹ نے کہا کہ بلڈوزر من مانی کے لیے نہیں ہے۔ اس کیس کی سماعت کے لیے 20 نومبر کی تاریخ مقرر کی گئی ہے۔ الہ آباد ہائی کورٹ میں سماعت کے دوران پریاگ راج ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے زونل افسر سنجیو اپادھیائے نے اپنا موقف پیش کرتے ہوئے کہا کہ وکیل کے گھر کو گرائے جانے کے اگلے ہی دن ہائی کورٹ میں سماعت ہوئی۔ انہیں کوئی اطلاع یا نوٹس نہیں دیا گیا۔ جس پر عدالت نے استفسار کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ کسی کا گھر گرانے کے لیے بلڈوزر لے کر کھڑے ہیں تو اس کے لیے ممکن نہیں کہ وہ آپ کو کیس کی اطلاع بھی نہ دے اور وہ بھی جب وکیل ہو۔ پی ڈی اے کے اہلکار نوٹس کی 300 کاپیاں لے کر ہائی کورٹ پہنچے تھے، جس کے دوران انہوں نے ہائی کورٹ کو بتایا کہ شہر میں 50 غیر قانونی تعمیرات کو گرا دیا گیا ہے اور جھونسی زون کے 300 لوگوں کو نوٹس جاری کیے گئے ہیں۔ الہ آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس پریتنکر دیواکر اور جسٹس آشوتوش سریواستو کی ڈویژن بنچ نے اس کیس کی سماعت کی اور اب کیس کی سماعت 20 نومبر کو ہوگی۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.