National

الیکٹورل بانڈ: چندہ دہندگان میں پاکستانی کمپنی کا نام بھی شامل! جانیں عطیات دینے والی سرفہرست کمپنیاں کون سی ہیں؟

86views

نئی دہلی: الیکشن کمیشن نے جمعرات کو ایس بی آئی کے ذریعہ سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے الیکٹورل بانڈز کا مکمل ڈیٹا اپنی ویب سائٹ پر اپ لوڈ کر دیا۔ اس ڈیٹا سے کئی اہم اور حیران کن معلومات سامنے آئی ہیں۔ اعداد و شمار کے مطابق، ایس بی آئی نے 2018 میں اسکیم شروع ہونے کے بعد سے 30 قسطوں میں 16518 کروڑ روپے کے الیکٹورل بانڈز کے بارے میں معلومات عام کی ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ یکم اپریل 2019 سے 15 فروری 2024 کے درمیان 22217 بانڈز خریدے گئے جو کہ ایک لاکھ روپے، 10 لاکھ روپے اور ایک کروڑ روپے کی مالیت کے ہیں۔ اس مدت کے دوران کیش کرائے گئے بانڈز کی کل تعداد 22030 ہے۔

الیکٹورل بانڈز کے ڈیٹا سے چونکا دینے والی معلومات سامنے آئی ہیں۔ پاکستان کی ایک پاور کمپنی نے بھی ہندوستانی سیاسی جماعتوں کو چندہ دیا ہے۔ ہندوستانی سیاسی جماعتوں کو انتخابی عطیات دینے والی یہ پاکستانی کمپنی پاور پروڈیوسر کے طور پر کام کرتی ہے۔ کمپنی کا نام ‘ہب پاور کمپنی لمیٹڈ’ (ہبکو) ہے، جو پاکستان کی سب سے بڑی بجلی پیدا کرنے والی کمپنی ہے۔ اس پاکستانی کمپنی نے 18 اپریل 2019 کو سیاسی جماعتوں کو تقریباً 95 لاکھ روپے کا عطیہ دیا تھا۔

اب بات کرتے ہیں ان کمپنیوں کی جنہوں نے ملک کی مختلف سیاسی جماعتوں کو فنڈ دینے کے لیے سب سے زیادہ قیمت والے الیکٹورل بانڈز خریدے۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے اپنی ویب سائٹ پر اپ لوڈ کی گئی معلومات کے مطابق فیوچر گیمنگ اینڈ ہوٹل سروسز اور میگھا انجینئرنگ انفراسٹرکچر لمیٹڈ اپریل 2019 سے جنوری 2024 تک سرفہرست ہیں۔ اس کمپنی نے 1368 کروڑ روپے کے الیکٹورل بانڈ خریدے ہیں۔ میگھا انجینئرنگ اینڈ انفراسٹرکچر لمیٹڈ، 966 کروڑ روپے کے فنڈ کے ساتھ، دوسری سب سے بڑی کمپنی ہے جس سے الیکٹورل بانڈ خریدے گئے ہیں۔

مبینہ طور پر 1368 کروڑ روپے کے الیکٹورل بانڈز کا خریدار جنوبی ہندوستانی لاٹری کنگ سینٹیاگو مارٹن ہیں، جو فیوچر گیمنگ کے مالک ہے۔ فیوچر کی ویب سائٹ کے مطابق مارٹن نے 13 سال کی عمر میں لاٹری کا کاروبار شروع کیا تھا۔ اس کے بعد وہ ملک بھر میں لاٹری کے خریداروں اور بیچنے والوں کا ایک وسیع نیٹ ورک تیار کرنے میں کامیاب ہوئے۔ جنوب میں یہ فرم مارٹن کرناٹک کے تحت چلتی ہے۔ جبکہ شمال مشرق میں لوگ اسے مارٹن سکم لاٹری کے نام سے جانتے ہیں۔

میگھا انجینئرنگ انفراسٹرکچر لمیٹڈ، ایک کمپنی جو ڈیم اور پاور پروجیکٹ بناتی ہے، پی وی کرشنا ریڈی اور پی پی ریڈی کی ملکیت ہے۔ اس کا صدر دفتر حیدرآباد میں ہے۔ کمپنی آبپاشی، پانی کے انتظام، بجلی، ہائیڈرو کاربن، نقل و حمل، عمارتوں اور صنعتی انفراسٹرکچر کے شعبوں میں کام کرتی ہے۔ یہ مرکزی اور ریاستی حکومتوں کے ساتھ پی پی پی (پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ) میں پیش پیش رہی ہے۔ اس وقت کمپنی کے پروجیکٹ ملک بھر کی 18 سے زیادہ ریاستوں میں چل رہے ہیں۔

الیکشن کمیشن نے اپنی ویب سائٹ پر دو مختلف تفصیلات اپ لوڈ کی ہیں۔ پہلی پی ڈی ایف 337 صفحات پر مشتمل ہے، جس میں الیکٹورل بانڈز خریدنے والی کمپنیوں اور اداروں کے نام ہیں۔ اس میں خریداری کی تاریخ اور رقم کی معلومات بھی شامل ہیں۔ جبکہ دوسری پی ڈی ایف 426 صفحات پر مشتمل ہے جس میں سیاسی جماعتوں کے نام، تاریخیں اور رقم کی تفصیلات دی گئی ہیں۔ تاہم یہ واضح نہیں ہے کہ کس کمپنی یا ادارے نے کون سے الیکٹورل بانڈ خریدے ہیں۔ دراصل اس لیے کہ فراہم کردہ معلومات میں شامل بانڈ نمبر کی تفصیلات نہیں دی گئی ہیں۔ اس کے ساتھ یہ بھی نہیں بتایا گیا کہ کس کمپنی نے کس پارٹی کو فنڈز دیے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.