National

’غلط فہمی میں نہ رہے بی جے پی، ملک میں انڈیا کی حکومت بنائیں گے‘، جَن وشواس ریلی میں رہل گاندھی کا خطاب

38views

بہار کی راجدھانی پٹنہ میں آج ’جَن وشواس ریلی‘ کے دوران عوام کی زبردست بھیڑ دیکھنے کو ملی۔ اس موقع پر عوام سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے مودی حکومت کو مختلف ایشوز پر تنقید کا نشانہ بنایا۔ انھوں نے کہا کہ ’’ملک میں جب بھی تبدیلی آتی ہے تو سب سے پہلے بہا رمیں طوفان شروع ہوتا ہے۔ یہاں سے طوفان باقی ریاستوں میں پہنچتا ہے۔ بہار ملک کے سیاسی اعصاب کا مرکز ہے۔ بدلاؤ کا آغاز یہاں سے ہی شروع ہوتا ہے۔‘‘

جَن وشواس مہاریلی: ’جھوٹوں کے سردار کی سبھی گارنٹیاں فیل ہو گئیں‘، کانگریس صدر کھڑگے کا پی ایم مودی پر تلخ تبصرہ

راہل گاندھی نے بی جے پی کے خلاف حملہ آور رخ اختیار کرتے ہوئے کہا کہ ’’بی جے پی کے لوگ غلط فہمی میں نہ رہیں۔ ہم بی جے پی و آر ایس ایس سے نہیں ڈرتے۔ ہمیں کوئی فرق نہیں پڑتا، کیونکہ ہم لک کے لیے لڑتے ہیں اور ملک کے لیے مرنے کو تیار ہیں۔ بی جے پی و آر ایس ایس کی حکومت کو ہٹا کر دکھائیں گے اور انڈیا اتحاد کی حکومت بنائیں گے۔‘‘

हम BJP-RSS से नहीं डरते।

हम देश के लिए लड़ते हैं और देश के लिए मर जाने को भी तैयार हैं।

हम BJP-RSS को हटाकर, INDIA की सरकार बनाएंगे।

: @RahulGandhi जी

बिहार pic.twitter.com/A4kh2G6uEX

— Congress (@INCIndia) March 3, 2024

کانگریس نے عوام سے نظریات کی جنگ میں نفرت کے خلاف محبت کا ساتھ دینے کی اپیل بھی کی۔ انھوں نے کہا کہ ’’آج ملک میں نظریات کی لڑائی چل رہی ہے۔ ایک طرف نفرت، تشدد، تکبر اور دوسری طرف محبت، بھائی چارہ اور احترام ہے۔ جیسے میں نے ’بھارت جوڑو نیائے یاترا‘ میں کہا کہ اگر آپ اتحاد کو سمجھنا چاہتے ہیں تو ایک لائن میں سمجھا جا سکتا ہے۔ ہم نفرت کے بازار میں محبت کی دکان کھولتے ہیں۔ اس ملک میں نفرت کیوں پھیل رہی ہے؟ یہ نفرت کا ملک نہیں ہے، آپ سبھی جانتے ہیں۔ ملک کے لوگوں کے دل میں نفرت نہیں ہے۔ محبت ہے، پیار ہے۔ ایک دوسرے کا احترام ہے۔ ملک کے لوگوں کے دل میں نفرت نہیں ہے۔ محبت ہے، پیار ہے۔ ایک دوسرے کا احترام ہے۔ تو سوال اٹھتا ہے کہ اس ملک میں نفرت کیوں پھیل رہی ہے؟‘‘

आज देश में दो विचारधाराओं की लड़ाई है।

एक तरफ नफरत, हिंसा और अहंकार है, दूसरी तरफ मोहब्बत, भाईचारा और सम्मान है।

यदि आप INDIA गठबंधन को समझना चाहते हैं तो उसके लिए एक ही लाइन है।

हम ‘नफरत के बाजार में मोहब्बत की दुकान’ खोलते हैं।

: @RahulGandhi जी

बिहार pic.twitter.com/6ZM7tDG78R

— Congress (@INCIndia) March 3, 2024

اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے راہل گاندھی کہتے ہیں ’’نفرت کی سب سے بڑی وجہ ملک میں ناانصافی ہے۔ نوجوانوں کے خلاف ناانصافی، آپ سب کے خلاف ناانصافی، کسانوں کے خلاف ناانصافی، سماجی ناانصافی، معاشی ناانصافی، وزیر اعظم جی دو تین بڑے ارب پتیوں کے لیے کام کرتے ہیں۔ ان کا 16 لاکھ کروڑ روپیہ وزیر اعظم گزشتہ 10 سالوں میں معاف کر چکے ہیں۔ میں آپ سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ انھوں نے ہندوستان کے کسان کا کتنا قرض معاف کیا؟ ہندوستان کے مزدوروں کا کتنا قرض معاف کیا؟ اس لیے ملک میں نفرت پھیل رہی ہے۔‘‘

आज देश में 40 साल में सबसे ज्यादा बेरोजगारी है।

क्योंकि जिन छोटे उद्योगों से रोजगार पैदा होते थे, मोदी सरकार ने GST, नोटबंदी कर उन्हें ख़त्म कर दिया।

देश में आज बड़े-बड़े उद्योगपतियों की मोनोपॉली बन रही है। नरेंद्र मोदी जी ने देश की सारी संपत्ति एक उद्योगपति को थमा दी है।

:… pic.twitter.com/roqNcP0UFV

— Congress (@INCIndia) March 3, 2024

راہل گاندھی نے اپنی تقریر کے دوران جی ایس ٹی اور نوٹ بندی کا بھی تذکرہ کیا۔ انھوں نے کہا کہ آج ہندوستان میں گزشتہ 40 سالوں میں سب سے زیادہ بے روزگاری ہے، کیونکہ بی جے پی نے چھوٹے کاروباریوں کو، کسانوں کو، چھوٹی و درمیانی صنعتوں کو برباد کر دیا ہے۔ ایک طرف نوٹ بندی کی، دوسری طرف جی ایس ٹی نافذ کر دیا۔ نتیجہ یہ ہوا کہ جو لوگ اس ملک کو روزگار دیتے ہیں، چھوٹے کاروبار والے، ان سب کا کام بند ہو گیا۔ جہاں بھی دیکھو بڑے بڑے صنعت کاروں کا دبدبہ ہے۔ ایک صنعت کار کے ہاتھ میں نریندر مودی جی نے ملک کے سبھی بندرگاہ، ایئرپورٹ، ڈیفنس کی انڈسٹری پکڑا دی ہے۔ آپ لوگوں کے لیے اس ملک میں کچھ نہیں بچا ہے۔

Follow us on Google News