National

سی اے اے کے خلاف اویسی کی سپریم کورٹ میں درخواست، عملدرآمد پر فوری روک کی اپیل

80views

نئی دہلی: مرکزی حکومت نے 2019 میں منظور شدہ شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) نافذ کر دیا ہے۔ اس کے خلاف مخالفت بھی دیکھی جا رہی ہے اور ناقدین سپریم کورٹ تک بھی پہنچ رہے ہیں۔ اس سلسلے میں آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اور حیدرآباد سے رکن پارلیمان اسدالدین اویسی نے بھی سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا ہے۔

اویسی نے سپریم کورٹ کے سامنے این آر سی کا مسئلہ بھی اٹھایا۔ انہوں نے عدالت میں درخواست دائر کر کے اپیل کی ہے کہ سی اے اے کے نفاذ پر فوری روک لگائی جائے۔ مجلس کے سربراہ نے کورٹ سے کہا کہ سی اے اے کے بعد ملک میں آر آر سی آ رہا ہے اور یہ دونوں کا ناپاک گٹھ جوڑ ہے۔ این آر سی کے ذریعے ہندوستانی مسلمانوں کو نشانہ بنانے کی سازش کی جا رہی ہے۔

اسدالدین اویسی نے الزام لگایا کہ سی اے اے کی بدی صرف شہریت دینے کو محدود کرنے میں سے ایک نہیں ہے، بلکہ ایک اقلیتی برادری کو تنہا کرنے کے لیے شہریت سے انکار کرنے کے نتیجے میں ان کے خلاف چنندہ کارروائی کرنا ہے۔ انہوں نے کورٹ سے اپیل کی ہے کہ ہدایت جاری کریں کہ ان کارروائیوں کے زیر التوا رہنے کے دوران، کسی بھی شخص کو شہریت ایکٹ، 1955 کی دفعہ 2(1)(ب) کا استعمال کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔

انہوں نے اپنی درخواست میں کہا کہ ترمیم شدہ قانون آئین کی اصل روح کے خلاف ہے۔ یہ آرٹیکل 14، 25 اور 21 کی خلاف ورزی کرتا ہے۔ ایسے میں جب تک اس معاملے کی سماعت ہوتی ہے تب تک اس قانون کے نافذ ہونے پر روک لگا دینی چاہیے۔ اس سے پہلے اسدالدین اویسی نے سی اے اے کا نوٹیفکیشن جاری کرنے پر کہا تھا کہ مذہب کی بنیاد پر کسی قانون کو نہیں بنایا جا سکتا اور اس پر سپریم کورٹ کئی فیصلے سنا چکا ہے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.