National

عآپ لیڈر سنجے سنگھ کی کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے سے ملاقات، ‘انڈیا‘ کے مشترکہ انتخابی منشور پر تبادلہ خیال

98views

نئی دہلی. عام آدمی پارٹی (عآپ) کے راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ سنجے سنگھ نے اتوار کو کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے کے ساتھ 20 منٹ سے زیادہ میٹنگ کی۔ بات چیت میں بنیادی طور پر ‘انڈیا’ بلاک کے ایک مشترکہ کم از کم پروگرام بنانے پر توجہ مرکوز کی گئی، جسے دونوں پارٹیاں اقتدار میں آنے کی صورت میں لاگو کرنے پر متفق ہوں۔

دہلی میں کھڑگے کی رہائش گاہ پر میٹنگ کے بعد صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے سنجے سنگھ نے کہا، “ہم نے اس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ ‘انڈیا’ بلاک کے اندر تمام پارٹیاں کس طرح ایک مشترکہ کم سے کم پروگرام بنانے کے لیے تعاون کر سکتی ہیں۔ اس کے علاوہ ہم نے اپوزیشن کے خلاف ایجنسیوں کے غلط استعمال اور آئین کے تحفظ کی اہمیت پر زور دیا۔‘‘

میٹنگ میں ایک مشترکہ منشور تیار کرنے پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا، سنگھ نے جلد ہی کسی فیصلے کی امید ظاہر کی۔ انہوں نے کہا، “ہم اپنے مشترکہ وژن کے موثر نفاذ کو یقینی بنانے کے لیے، جہاں بھی ضروری ہو، ‘انڈیا’ بلاک کے اندر رہنماؤں کی حمایت کے لیے پوری طرح پرعزم ہیں۔‘‘

اتوار کو جاری بی جے پی کے منشور پر تبصرہ کرتے ہوئے سنگھ نے کہا، ’’آپ کے پاس 10 سال کا رپورٹ کارڈ ہے۔ آپ نے 10 سالوں میں کیا حاصل کیا؟ منشور صرف وعدوں کا نہیں ہونا چاہیے۔ لوگ منشور پر کتنا اعتماد کر سکتے ہیں؟ کیا لوگوں کو 20 کروڑ نوکریاں ملیں؟ کیا کسانوں کو ایم ایس پی ملا؟ کیا مہنگائی کم ہوئی؟‘‘ خیال رہے کہ سنگھ کو تہاڑ جیل سے 2 اپریل کو رہا کیا گیا تھا۔

سپریم کورٹ نے عآپ لیڈر کو مبینہ ایکسائز پالیسی گھوٹالہ سے متعلق منی لانڈرنگ کیس میں یہ مشاہدہ کرنے کے بعد ضمانت دے دی کہ انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) کو سنگھ کی ضمانت پر رہائی پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔ سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ انہیں ٹرائل کورٹ کی طرف سے طے شدہ شرائط و ضوابط پر رہا کیا جائے گا، یہ واضح کرتے ہوئے کہ سیاسی رہنما زیر التوا کیس میں اپنے کردار کے بارے میں کوئی عوامی تبصرہ یا تقریر نہیں کرے گا۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.