National

سپریم کورٹ قید و بند کی صعوبت برداشت کر رہے روہنگیا پناہ گزینوں کی رِہائی سے متعلق عرضی پر مارچ میں کرے گا سماعت

54views

ناجائز طریقے سے جیلوں اور حراستی مراکز میں بند روہنگیا پناہ گزینوں کو رِہا کرنے کے لیے حکومت کو ہدایت دینے والی عرضی پر سماعت کے لیے سپریم کورٹ نے حامی بھر دی ہے۔ بڑی تعداد میں روہنگیا پناہ گزیں قید و بند کی صعوبت برداشت کر رہے ہیں اور اس معاملے کا تذکرہ کرتے ہوئے ایڈووکیٹ پرشانت بھوشن نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ معاملے کی سماعت طے نہیں کی گئی ہے۔ اس کے بعد جسٹس بی آر گوئی اور جسٹس سندیپ مہتا کی بنچ نے عرضی پر سماعت کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔

ٹاڈا عدالت نے 1993 بم دھماکوں کے ملزم عبدالکریم ٹنڈا کو بری کر دیا

عدالت عظمیٰ نے رہنگیا پناہ گزینوں کی رِہائی سے متعلق معاملے پر مارچ میں سماعت کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ عدالت نے گزشتہ سال 10 اکتوبر کو اس معاملے میں مرکزی حکومت کو ایک نوٹس جاری کیا تھا جس میں چار ہفتوں کے اندر رد عمل ظاہر کرنے کے لیے کہا گیا تھا۔ اب اس معاملے میں پیش رفت ہوئی ہے تو مارچ میں سبھی فریقین اپنی بات عدالت کے سامنے رکھیں گے۔

ہماچل پردیش: کانگریس کے 6 باغی ارکان اسمبلی نااہل قرار، وہپ کی خلاف ورزی پر اسپیکر کی کارروائی

قابل ذکر ہے کہ یہ عرضی پریالی سور نے داخل کی ہے۔ ان کی طرف سے پرشانت بھوشن عدالت میں پیش ہوئے۔ پریالی سور نے عرضی میں کہا ہے کہ روہنگیا میانمار کے رخائن ریاست کے اقلیت ہیں۔ اقوام متحدہ نے انھیں دنیا کے سب سے زیادہ استحصال زدہ نسلی اقلیت قرار دیا ہے۔ عرضی میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ روہنگیا پناہ گزیں مظالم سے بچنے کے لیے ہندوستان سمیت دیگر پڑوسی ممالک میں پہنچ گئے۔ حاملہ خواتین اور نابالغوں سمیت سینکڑوں روہنگیا پناہ گزینوں کو اس وقت ہندوستان کی جیلوں اور حراستی مراکز میں غیر قانونی و غیر معینہ مدت تک حراست میں رکھا گیا ہے۔

Follow us on Google News