National

کسی بھی مذہبی مقام کی نوعیت کو تبدیل نہیں کیا جاسکتا: سپریم کورٹ

Supreme Court of India
Supreme Court of India
112views

نئی دہلی: گیان واپی کیس کی جمعہ کو سپریم کورٹ میں سماعت ہوئی۔ سپریم کورٹ نے سماعت کے دوران اہم تبصرہ کیا ہے۔ عدالت نے کہا کہ عبادت گاہوں کا قانون کہتا ہے کہ کسی بھی مذہبی مقام کی نوعیت کو تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔ ایسے میں یہ دیکھنا ہوگا کہ آزادی کے وقت یعنی 15 اگست 1947 کو اس جگہ کی مذہبی نوعیت کیا تھی۔

اس دن جو مذہبی نوعیت غالب آئے گی وہ اس بات کا تعین کرے گی کہ اس ایکٹ کے موجود ہونے کے باوجود کیس کی سماعت ہو سکتی ہے یا نہیں، جس کے لیے ثبوت لانے ہوں گے۔ اب اس معاملے کی اگلی سماعت 16 اکتوبر کو ہوگی۔

گیانواپی کیس پر سپریم کورٹ میں جمعہ کو ہوئی سماعت میں، مسلم فریق (انجمن انتظامیہ مسجد کمیٹی) کی جانب سے حذیفہ احمدی نے کہا کہ اصل درخواست مینٹینیبلٹی کے بارے میں ہے، اگر یہ برقرار نہیں رہ سکتی ہے تو بقیہ درخواست کا کوئی مطلب نہیں ہوگا۔ سپریم کورٹ گیانواپی کیس میں داخل کی گئی کل تین عرضیوں کی سماعت کر رہی ہے۔

حذیفہ احمدی نے عدالت عظمیٰ سے کہا کہ سماعت ملتوی کر دی جائے اور سماعت معمول کے دن ہونی چاہیے کیونکہ آج عدالت کا وقت ختم ہو رہا ہے۔ سماعت کے دوران عبادت گاہوں کے قانون کے حوالے سے بھی بحث ہوئی۔ اس کیس کی سماعت چیف جسٹس (سی جے آئی) جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی سربراہی میں تین ججوں کی بنچ کر رہی ہے، جس میں جسٹس جے بی پاردی والا اور جسٹس منوج مشرا بھی شامل ہیں۔

سی جے آئی نے مسلم فریق کے وکیل سے کہا کہ آپ کہہ رہے ہیں کہ یہ کیس 1992 کے پلیس آف ورشپ ایکٹ کی وجہ سے نہیں سنا جا سکتا، لیکن یہ دیکھنا باقی ہے کہ اس کا مذہبی کردار کیا تھا۔ اس کے بعد مسلم فریق نے کہا کہ ہندو فریق نے خود کہا تھا کہ یہ مسجد ہے، لیکن ہندو فریق نے اس کی تردید کی اور کہا کہ اس نے ایسا نہیں کہا۔ اس کے بعد سپریم کورٹ نے سماعت 16 اکتوبر تک ملتوی کر دی۔

عبادت گاہوں کا ایکٹ کیا ہے؟
ملک کی اس وقت کی نرسمہا راؤ حکومت نے 1991 میں پلیس آف ورشپ ایکٹ یعنی عبادت گاہوں کا قانون نافذ کیا تھا۔ قانون لانے کا مقصد ایودھیا رام جنم بھومی تحریک کی بڑھتی ہوئی شدت اور جارحانہ روش کو قابو میں کرنا تھا۔ حکومت نے قانون میں یہ شرط رکھی ہے کہ ایودھیا میں بابری مسجد کے علاوہ ملک کے کسی بھی عبادت گاہ پر دوسرے مذاہب کے لوگوں کا دعویٰ قبول نہیں کیا جائے گا۔ اس میں کہا گیا ہے کہ ملک کی آزادی کے دن یعنی 15 اگست 1947 کو کسی بھی مذہبی ڈھانچے یا عبادت گاہ پر، چاہے کسی بھی شکل میں ہو، دوسرے مذاہب کے لوگ دعویٰ نہیں کریں گے۔

ایودھیا کی بابری مسجد کو اس قانون سے خارج کر دیا گیا یا اسے مستثنیٰ قرار دیا گیا۔ کیونکہ یہ تنازع آزادی سے قبل عدالتوں میں زیر التوا تھا۔ اس ایکٹ میں کہا گیا ہے کہ 15 اگست 1947 کو جس مذہبی مقام کا تعلق تھا وہ آج اور مستقبل میں بھی اسی برادری کا رہے گا۔ تاہم ایودھیا تنازعہ کو اس سے باہر رکھا گیا کیونکہ اس پر پہلے سے قانونی تنازع چل رہا تھا۔

قابل غور بات یہ ہے کہ سپریم کورٹ نے ایودھیا رام جنم بھومی تنازعہ پر اپنے 1,045 صفحات کے فیصلے میں 1991 کے اس قانون کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ یہ قانون 15 اگست 1947 کو عوامی عبادت گاہوں کے مذہبی کردار میں تبدیلی اور تحفظ کی ضمانت دیتا ہے۔ سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ قانون ہر مذہبی طبقے کو یہ یقین دلاتا ہے کہ ان کے مذہبی مقامات کی حفاظت کی جائے گی اور ان کے کردار کو تبدیل نہیں کیا جائے گا۔ عبادت گاہوں کا ایکٹ مقننہ کے ذریعہ بنایا گیا ایک انتظام ہے جو عبادت گاہوں کے مذہبی کردار کو ہماری سیکولر اقدار کا ایک لازمی پہلو بناتا ہے۔ یہ ایک اچھا قانون ہے۔

The Gyan Vapi case was heard in the Supreme Court on Friday. The Supreme Court has made an important comment during the hearing. The court said that the Law on Places of Worship states that the nature of any religious place cannot be changed. In such a case, it has to be seen what was the religious nature of this place at the time of independence i.e. on 15 August 1947.

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.