National

نوح تشدد معاملہ: ضمانت پر رہا بٹو بجرنگی نے ایک شخص کو سرعام زدوکوب کیا، پولیس اہلکار محض تماشائی بنا رہا

63views

نئی دہلی: گزشتہ سال ہریانہ کے نوح (میوات) میں تشدد کے دوران گرفتار ہونے والا بٹو بجرنگی فی الحال ضمانت پر باہر ہے، اس کی ایک شخص کو زدوکوب کرنے کی ویڈیو منظر عام پر آئی ہے۔ اس ویڈیو میں وہ ایک شخص کو لاٹھی سے پیٹ رہا ہے اور ساتھ میں ایک پولیس والا کھڑا ہے جو اس کی پٹائی دیکھ رہا ہے لیکن اسے روکنے کے لیے کچھ نہیں کر رہا۔

این ڈی ٹی وی پر شائع رپورٹ کے مطابق، بٹو بجرنگی کی یہ ویڈیو اب سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی۔ تاہم پولیس نے ابھی تک اس ویڈیو کے حوالے سے کوئی مقدمہ درج نہیں کیا ہے۔ پولیس افسر نے بتایا کہ یہ ویڈیو یکم اپریل کا ہے اور جس شخص کو پیٹا جا رہا ہے وہ فرید آباد کے سرور پور کا رہنے والا ہے۔ شمو نامی شخص پر الزام تھا کہ اس نے اپنے محلے کی دو لڑکیوں کو چاکلیٹ دے کر اپنے گھر بلایا اور مقامی لوگوں کو شک تھا کہ وہ ان کا جنسی استحصال کرنا چاہتا ہے۔ اس کے بعد پڑوسی گھر میں داخل ہوئے اور شمو کو پکڑ لیا۔

واقعہ کی خبر پھیل گئی اور بجرنگی کی گائے کی حفاظت کرنے والی مبینہ ٹیم ’گئو رکشا بجرنگ فورس‘ کے ارکان موقع پر پہنچے اور شامو کو اپنے ساتھ سنجے انکلیو میں ان کے لیڈر کے گھر لے گئے۔ بجرنگی کے گھر کے باہر کی ویڈیو میں گئو رکشک اور بجرنگ دل کے ارکان لاٹھی پکڑے ہوئے ہیں اور گروپ میں شامل دیگر لوگ شامو کو زمین پر گھسیٹ رہے ہیں۔

شامو سے کچھ فاصلے پر ایک پولیس اہلکار بھی کرسی پر بیٹھا نظر آتا ہے جو کرسی سے اٹھتا ہے لیکن شامو کی مدد کے لیے آگے نہیں آتا۔ ایک شخص پھر دوسروں سے شامو کو اپنی طرف کرنے کو کہتا ہے اور بجرنگی عرف راج کمار اسے لاٹھی سے کم از کم چار بار مارنے کے لیے آگے بڑھتا ہے۔ پولیس حکام نے بتایا کہ بجرنگی کے آگے بڑھنے سے پہلے ایک لڑکی کی ماں نے بھی شامو کو ڈنڈے سے مارا تھا۔

سارن پولیس اسٹیشن کے افسر نے کہا، ’’ہم نے یہ وائرل ویڈیو دیکھا ہے اور ہم اس شخص کی تلاش کر رہے ہیں جس کی پٹائی کی گئی تھی۔ اگر وہ اس معاملے میں ایف آئی آر درج کرتا ہے تو ہم کارروائی کریں گے۔ اگر اس نے شکایت نہیں کی تو ہم ویڈیو اور سوشل میڈیا کے ذریعے ملزمان کو تلاش کریں گے اور ان کے خلاف کارروائی کریں گے۔

یاد رہے کہ ہریانہ کے نوح (علاقہ میوات) میں گزشتہ سال جولائی میں وشو ہندو پریشد کی طرف سے نکالے گئے جلوس کے دوران فرقہ وارانہ تشدد شروع ہوا، جو گڑگاؤں (گروگرام) اور بادشاہ پور سمیت دیگر علاقوں میں پھیل گیا۔ اس تشدد میں 5 افراد ہلاک اور کم از کم 70 افراد زخمی ہوئے تھے۔ ایک مسجد کو بھی آگ لگا دی گئی تھی اور جان گنوانے والوں میں ایک عالم دین بھی شامل تھے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.