National

نریندر مودی نے چندے کے دھندے کو چھپانے کے لیے پوری طاقت جھونک دی: راہل گاندھی

32views

راہل گاندھی نے الیکٹورل بانڈ کے حوالہ سے وزیراعظم مودی پر سخت حملہ بولتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے ‘چندے کے دھندے’ کو چھپانے کے لیے اپنی پوری طاقت جھونک دی ہے۔ الیکٹورل بانڈز سے متعلق تفصیلات کو عام کرنے کے لئے اسٹیٹ بینک آف انڈیا کی جانب سے چار مہینے کی مہلت طلب کرنے پر راہل نے کہا کہ انتخابات سے قبل مودی کے ‘اصلی چہرے’ کو چھپانے کی یہ ‘آخری کوشش’ ہے۔

ایس بی آئی الیکٹورل بانڈ سے متعلق تفصیلات فراہم کرنے سے قاصر، سپریم کورٹ سے 30 جون تک مہلت کی استدعا

راہل گاندھی نے ایکس پر لکھا، ’’نریندر مودی نے ’چندے کے دھندے‘ کو چھپانے کے لیے پوری طاقت جھونک دی ہے۔ جب سپریم کورٹ نے کہا کہ ہے کہ الیکٹورل بانڈ کی حقیقت جاننا ملک کے باشندگان کا حق ہے، تب ایس بی آئی کیوں چاہتا ہے کہ انتخابات سے قبل یہ معلومات عوامی نہ ہو پائے؟‘‘

ای ڈی نے ٹی ایم سی کی رہنما مہوا موئترا کو فیما کی خلاف ورزی معاملے میں دوبارہ طلب کیا

انہوں نے مزید کہا، ’’ایک کلک پر نکالی جا سکنے والی معلومات کے لیے 20 جون تک کا وقت مانگنا بتاتا ہے کہ دال میں کچھ کالا نہیں ہے، پوری دال ہی کالی ہے۔ ملک کا ہر آزاد ادارہ ’موڈانی خاندان‘ بن کر ان کی بدعنوانی پر پردہ ڈالنے میں لگا ہے۔ انتخابات سے قبل مودی کے ’اصلی چہرے‘ کو چھپانے کی یہ ’آخری کوشش‘ ہے۔

کسان تحریک: دہلی میں پرامن مظاہرے کی درخواست سپریم کورٹ نے مسترد کر دی

دریں اثنا، راہل گاندھی کی پوسٹ کو شیئر کرتے ہوئے جے رام رمیش نے بھی اس معاملہ پر تبصرہ کیا ہے۔ جے رام رمیش نے لکھا، ’’آپ کرونولوجی سمجھیں، پہلے انتخابات ہوں گے، پھر الیکٹورل بانڈ کی معلومات منظر عام پر آئے گی۔ برسراقتدار جماعت آخر سیاسی فنڈنگ سے حاصل اپنی اتھاہ دولت کے ذرائع کے انکشاف سے اتنا کیوں گھبرا رہی ہے؟‘‘

جے رام رمیش نے مزید کہا، ’’یاد رہے کہ سیاسی جماعتوں کو حاصل ہونے والے عطیات اور الیکٹورل ٹرسٹ کی تفتیش سے معلوم ہوا ہے کہ جن 30 سے زائد کمپنیوں پر ای ڈی/آئی ٹی/سی بی آئی نے چھاپے مارے تھے، انہوں نے چھاپے کے بعد بی جے پی کو 335 کروڑ روپے تک کا عطیہ دیا ہے۔ بی جے پی کو اپنی سیاسی فنڈنگ کا بڑا حصہ (60+ فیصد) الیکٹورل بانڈز سے ملا ہے۔ الیکٹورل بانڈ کے فنڈز کے انکشاف سے مودی حکومت کے کون سے غلط کام سامنے آنے والے ہیں؟‘‘

आप क्रोनोलॉजी समझिए: पहले चुनाव होंगे, फ़िर इलेक्टोरल बांड की जानकारी सामने आएगी। सत्ताधारी दल आख़िर पॉलीटिकल फंडिंग से प्राप्त अपने अथाह धन के स्रोत के खुलासे से इतना क्यों घबरा रहा है?

याद रहे कि राजनीतिक दलों को मिलने वाले चंदे और चुनावी ट्रस्ट के जांच-पड़ताल से पता चला है कि… https://t.co/4v08WYSVif

— Jairam Ramesh (@Jairam_Ramesh) March 4, 2024

کانگریس لیڈران نے یہ ردعمل ایس بی آئی کی جانب سے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کر کے الیکشن کمیشن آف انڈیا کو الیکٹورل بانڈز کے متعلق معلومات فراہم کرنے کے لیے چار مہینے کا وقت مانگنے کے بعد ظاہر کیا۔ درخواست میں ایس بی آئی نے بتایا ہے کہ 12 اپریل، 2019 سے 15 فروری، 2024 کے درمیان مختلف سیاسی جماعتوں کو چندہ دینے کے لیے 22217 الیکٹورل بانڈز جاری کیے گئے تھے۔ کیش گئے بانڈز ہر مرحلے کے آخر میں مجاز شاخوں کی طرف سے مہر بند لفافوں میں ممبئی کی مرکزی شاخ میں جمع کروائے گئے تھے۔ ایس بی آئی نے کہا کہ چونکہ دو مختلف معلومات کے ذخیرے موجود ہیں، اس لیے انہیں مطلوبہ تفصیلات حاصل کرنے کے لیے 44434 معلوماتی سیٹوں کا مطالعہ کرنا ہوگا۔

Follow us on Google News