National

کیجریوال کے ذریعہ ’ای ڈی حراست‘ سے جاری سرکاری حکم کا ای ڈی نے لیا نوٹس، جانچ کا فیصلہ

53views

دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال اس وقت ای ڈی کی حراست میں ہیں، اور حراست میں رہتے ہوئے بھی وہ حکومت چلا رہے ہیں۔ انھوں نے ای ڈی ریمانڈ پر رہتے ہوئے 23 مارچ کو سرکاری حکم جاری کیا تھا جس پر انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) نے نوٹس لیا ہے اور اس بات کی جانچ کرنے کا فیصلہ کیا ہے کہ کیا یہ درست ہے؟ ایک ای ڈی افسر نے اس تعلق سے بتایا کہ وہ اس بات کی تحقیقات کر رہے ہیں کہ کیا ایسا حکم جاری کرنا پی ایم ایل اے کورٹ کی طرف سے دی گئی ہدایت کے دائرے میں ہے؟

دراصل یہ سوال کئی لوگ اٹھا رہے ہیں کہ کیا حراست کے دوران حکومت چلانے کے لیے کیجریوال ضروری دستاویز پر دستخط کر سکتے ہیں؟ حالانکہ عدالتی حکم کے مطابق کیجریوال روزانہ شام چھ سے سات بجے کے درمیان نصف گھنٹہ اپنی بیوی سنیتا کیجریوال اور پرسنل اسسٹنٹ بیبھو کمار سے، جبکہ نصف گھنٹہ اپنے وکلاء سے ملاقات کر سکتے ہیں۔ یعنی اس درمیان وہ ضروری بات چیت اور صلاح و مشورہ کرنے کا حق رکھتے ہیں، لیکن وہ سرکاری احکام جاری کر سکتے ہیں یا نہیں اس بارے میں ای ڈی جانچ کر رہی ہے۔

واضح رہے کہ دہلی آبکاری پالیسی معاملہ میں وزیر اعلیٰ کیجریوال نے جیل سے حکومت چلانے کے اپنے دعویٰ کو حقیقت میں بدلتے ہوئے ہفتہ کے روز ای ڈی کی قید سے اپنا پہلا حکم جاری کیا تھا۔ یہ حکم وزارت برائے آب سے متعلق ہے۔ کیجریوال نے وزیر برائے آب آتشی کو دہلی کے کئی علاقوں میں پینے کے پانی اور سیور مسئلہ کا حل نکالنے کی ہدایت دی۔ آتشی نے خود میڈیا کے سامنے اتوار کو اس سلسلے میں انکشاف کیا۔ انھوں نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ وزیر اعلیٰ کو جب پتہ چلا کہ دہلی کے کچھ علاقوں میں پانی اور سیور کا مسئلہ ہو رہا ہے تو وہ فکر مند ہوئے۔ آتشی کے مطابق وزیر اعلیٰ کا ماننا ہے کہ ان کے جیل میں ہونے کی وجہ سے لوگوں کو ذرا بھی تکلیف نہیں ہونی چاہیے۔ گرمیاں بھی آ رہی ہیں، اس لیے انھوں نے ای ڈی کی حراست میں رہتے ہوئے ہفتہ کو حکم جاری کیا کہ جہاں پانی کی کمی ہے، وہاں مناسب تعداد میں ٹینکروں کا انتظام کیا جائے۔ چیف سکریٹری سمیت دیگر افسران کو مناسب احکامات دیے جائیں تاکہ عوام کے مسائل کا فوراً حل نکلے۔ اس معاملے میں ضرورت پڑنے پر لیفٹیننٹ گورنر کی بھی مدد لیں۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.