National

کانگریس نے مودی حکومت کے ذریعہ پیش 25 کروڑ لوگوں کی غربت ختم ہونے کی رپورٹ کو مسترد کیا

89views

نئی دہلی: کانگریس نے نیتی آیوگ کے ذریعہ گزشتہ روز جاری کردہ غریبی کے اعداد و شمار کو خارج کرتے ہوئے مودی حکومت کو کٹہرے میں کھڑا کیا ہے۔ کانگریس نے کہا کہ مودی حکومت غریبی، بھکمری، معاشی عدم مساوات، بے روزگاری اور مہنگائی کا حل تلاش کرنے کی جگہ جھوٹ کا سہارا لے رہی ہے۔ مودی حکومت کے ذریعہ یہ سازش 25 کروڑ غریبوں کو مفت راشن اور سبسیڈی سے محروم کرنے کے لیے تیار کی گئی ہے۔

तुम्हारी फाइलों में गांव का मौसम गुलाबी है
मगर ये आंकड़े झूठे हैं, ये दावा किताबी है

ये लाइनें मोदी सरकार पर चरितार्थ होती हैं।

अब मोदी सरकार ने एक नया गुब्बारा छोड़ा है-

बताया जा रहा है कि पिछले 9 साल में 24.82 करोड़ भारतीयों को गरीबी से उबार दिया गया है, लेकिन असल में यह… pic.twitter.com/4F6girZru0

— Congress (@INCIndia) January 18, 2024

جمعرات کو نئی دہلی واقع کانگریس ہیڈکوارٹر میں منقعد ایک پریس کانفرنس میں کانگریس ترجمان سپریا شرینیت نے نیتی آیوگ کی رپورٹ پر کئی اہم باتیں میڈیا کے سامنے رکھیں۔ انھوں نے کہا کہ ’’اب مودی حکومت نے ایک نیا غبارہ چھوڑا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ گزشتہ 9 سالوں میں 24.82 کروڑ ہندوستانیوں کو غریبی سے باہر نکالا گیا ہے، لیکن حقیقت میں یہ غریبوں کے خلاف ایک بہت بڑی سازش ہے۔ حکومت کا یہ دعویٰ زمینی حقائق کے برعکس ہے۔ اگر غریبوں کی تعداد گھٹ گئی ہے تو استعمال کیوں گھٹ رہا ہے۔ اگر غریبی 11.7 فیصد تک کم ہو چکی ہے، یعنی صرف 15 کروڑ لوگ ہی غریب ہیں تو پھر حکومت 80 کروڑ لوگوں کو مفت راشن کیوں دے رہی ہے۔ نیتی آیوگ کے اس دعوے کی حمایت کسی بھی تھرڈ پارٹی نے کیوں نہیں کی۔ ورلڈ بینک، آئی ایم ایف وغیرہ کسی نے تو یہ بات مانی ہوتی۔ غریبی کی پیمائش کے طے پیمانے ہیں، پھر ایسے پیمانوں کو کیوں منتخب کیا گیا جو حکومت کے فلیگ شپ منصوبوں پر مبنی ہیں۔‘‘

गगनचुंबी इमारतों और AC कमरों में बैठकर, मनमुताबिक सरकारी योजनाओं के बल पर गरीबी से जुड़ा एक सर्वे रिलीज कर दिया गया।

यह 10 साल की मोदी सरकार की विफलताओं का सबसे बड़ा प्रमाण है।

जिसमें मोदी सरकार गरीबी, भुखमरी, आर्थिक असमानताओं, बेरोजगारी और महंगाई का समाधान ढूंढने की बजाय,… pic.twitter.com/1358xNBel7

— Congress (@INCIndia) January 18, 2024

سپریا شرینیت نے کہا کہ جو ثبوت غریبی کے ہیں، وہ حکومت کے دعووں کے بالکل برعکس ہیں۔ ایسا اس لیے کیونکہ طلب میں آئی مندی صاف جھلک رہی ہے۔ حال ہی میں ایک گروتھ (ترقی) نمبر آیا تھا، جس پر حکومت سینہ ٹھوک رہی تھی۔ اسی جی ڈی پی نمبر میں صارفین کا بھی ڈاٹا سامنے آیا۔ ڈاٹا ظاہر کرتا ہے کہ اس مالیاتی سال میں استعمال (صارفیت) سے متعلق شرح اضافہ 4.4 فیصد تک نیچے آ گرا ہے، جو گزشتہ مالیاتی سال میں 7.5 فیصد تھا۔ یعنی استعمال لگاتار کم ہو رہا ہے۔ لیکن مودی حکومت کی مانیں تو ملک کے 25 کروڑ لوگ اب غریب نہیں رہے۔ جب غریب نہیں رہے تو پھر وہ روز مرہ کے سامان کیوں نہیں خرید رہے۔ آپ اگر زیادہ خوشحال ہوں گے اور کم غریب ہوں گے تو آپ زیادہ چیزیں خریدیں گے، زیادہ چیزوں کا استعمال کریں گے، جو کہ اس ملک کا غریب نہیں کر رہا ہے۔

हाल ही में एक ग्रोथ नंबर आया था, जिस पर सरकार सीना ठोंक रही थी। उसी GDP नंबर में उपभोग का भी डेटा सामने आया।

डेटा दिखाता है कि इस वित्तीय वर्ष में उपभोग की वृद्धि दर 4.4% पर आ गिरी है, जो पिछले वित्तीय वर्ष में 7.5% थी। यानी उपभोग लगातार कम हो रहा है।

लेकिन मोदी सरकार की… pic.twitter.com/9pPZT2Bgae

— Congress (@INCIndia) January 18, 2024

سپریا شرینیت کا کہنا ہے کہ غریبی کی پیمائش کے کچھ طریقے ہوتے ہیں۔ ان میں سے ایک ہے کہ کیا آپ کو مقوی غذا مل رہی ہے، کیا آپ کو دو وقت کی روٹی نصیب ہے؟ لیکن پیمانہ بدل دیا گیا ہے کہ اگر آپ کے گھر میں بیت الخلا بنا ہے تو آپ غریب نہیں ہیں۔ اگر کسی گاؤں میں پانچ گھروں میں بجلی کے تار ڈال دیے گئے تو پورے گاؤں کو الیکٹریفائیڈ مانا جائے گا اور وہ غریبی سے دور ہو جائے گا۔ یعنی وہ غریب نہیں رہیں گے۔ دراصل یہ حکومت کی 25 کروڑ غریب لوگوں کو مفت راشن اور سبسیڈی سے محروم کرنے کی ایک سازش ہے۔ جلد ہی یہ غریب اس فہرست سے باہر نکال دیے جائیں گے، اس لیے یہ پوری سازش تیار کی جا رہی ہے۔

UPA सरकार ने 27 करोड़ लोगों को गरीबी रेखा से बाहर निकाला।

वर्ल्ड बैंक ने इस आंकड़े पर थर्ड पार्टी रिपोर्ट की पुष्टि की और इसे सही माना। लेकिन मोदी सरकार अपने ही मुंह मियां मिट्ठू बन रही है।

यहां NITI आयोग ने खुद ही अनुमान लगाया, खुद ही सर्वे कराया, खुद ही रिपोर्ट बनाई और खुद… pic.twitter.com/kGdiVjgWUN

— Congress (@INCIndia) January 18, 2024

سپریا شرینیت نے پریس کانفرنس کے دوران زور دے کر کہا کہ یو پی اے حکومت نے 27 کروڑ لوگوں کو خط افلاس سے باہر نکالا تھا۔ ورلڈ بینک نے اس نمبر پر تھرڈ پارٹی رپورٹ کی تصدیق کی اور اسے درست مانا۔ لیکن مودی حکومت اپنے ہی منھ میاں مٹھو بن رہی ہے۔ یہاں نیتی آیوگ نے خود ہی اندازہ لگایا، خود ہی سروے کرایا، خود ہی رپورٹ بنائی اور خود کی رپورٹ کو مشتہر بھی کیا۔ پھر پی ایم مودی اور ان کی کابینہ نے اس رپورٹ کی واہ واہی کی۔ مودی حکومت صرف غریبوں کا مذاق نہیں اڑا رہی ہے بلکہ وہ پورے ملک کا مذاق بنا رہی ہے۔

Follow us on Google News