National

کانگریس نے ہریانہ میں اکثریت کا کیا دعویٰ، بھوپیندر سنگھ ہڈا نے گورنر سے ملاقات کے لیے مانگا وقت

71views

ہریانہ میں اس وقت سیاسی اتھل پتھل عروج پر ہے۔ تین آزاد ارکان اسمبلی کی حکومت سے حمایت واپسی کے بعد نائب سنگھ سینی حکومت کے مستقبل پر سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔ ایسے میں ہریانہ کے سابق وزیر اعلیٰ اور کانگریس لیڈر بھوپیندر سنگھ ہڈا نے ریاست میں اپوزیشن کی اکثریت کا دعویٰ کیا ہے۔ ان کے سکریٹری شادی لال کپور نے ہریانہ راج بھون کو خط لکھ کر ریاست کی موجودہ سیاسی صورتحال پر گورنر سے ملاقات کا وقت مانگا ہے۔ اس کے لیے گورنر سے 10 مئی کو وقت دینے کی درخواست کی گئی ہے۔

ریاست کے سابق وزیر اعلیٰ بھوپیندر سنگھ ہڈا نے وزیر اعلیٰ نائب سنگھ سینی سے اخلاقی بنیادوں پر استعفیٰ طلب کرتے ہوئے ریاست میں صدر راج نافذ کرنے اور نئے سرے سے اسمبلی انتخابات کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں نائب سنگھ سینی کی حکومت اقلیت میں آ گئی ہے اور کانگریس کے ارکان اسمبلی متحد ہیں۔ انہوں نے ارکان اسمبلی کی تعداد شمار کراتے ہوئے کہا کہ کانگریس کے پاس 30، جے جے پی کے 10 اور 3 آزاد اراکین اسمبلی ہیں۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے بلراج کنڈو اور ابھے چوٹالہ کو ملا کر مجموعی طور پر 45 ارکان اسمبلی کی تعداد بتائی ہے اور ان کی پریڈ کرانے کی بھی بات کہی ہے۔

دوسری طرف ہریانہ میں 3 آزاد ارکان اسمبلی کی حکومت سے حمایت واپسی کے بعد جن نائک جنتا پارٹی (جے جے پی) بھی سرگرم ہو گئی ہے۔ جے جے پی نے گورنر بنڈارو دتاترے کو خط لکھ کر ریاست کی موجودہ سیاسی صورتحال پر مناسب فیصلہ لینے کی درخواست کی ہے۔ جے جے پی لیڈر اور ریاست کے سابق نائب وزیر اعلی دشینت چوٹالہ نے گورنر کو بھیجے گئے خط میں دعویٰ کیا ہے کہ نائب سنگھ سینی کی قیادت والی بی جے پی حکومت اقلیت میں ہے۔

واضح رہے کہ ہریانہ میں اس وقت سیاسی بھونچال آ گیا جب 7 مئی کو ریاست کے 3 آزاد ارکان اسمبلی نے بی جے پی حکومت سے حمایت واپس لینے کا اعلان کر دیا۔ جن تین ارکان اسمبلی نے ہریانہ کی نائب سنگھ سینی حکومت سے حمایت واپس لی ہے، ان میں پونڈری کے رندھیر گولن، نیلوکھیڑی کے دھرم پال گوندر اور چرخی دادری کے سوم ویر سانگوان شامل ہیں۔ 7 مئی کو ایک پریس کانفرنس میں ان آزاد ارکان اسمبلی نے بی جے پی سے حمایت واپس لینے اور کانگریس کی حمایت کرنے کا اعلان کیا تھا۔ اس دوران کانگریس لیڈر بھوپیندر سنگھ ہڈا نے کہا تھا کہ صحیح وقت پر لیا گیا فیصلہ ضرور نتیجہ خیز ہوگا۔

ہریانہ میں تین آزاد ارکان اسمبلی کی حمایت واپس لینے کے بعد نائب سنگھ سینی کی حکومت کے پاس صرف 43 ارکان اسمبلی ہیں۔ ریاست کے سابق وزیر اعلیٰ منوہر لال کھٹر اور رنجیت چوٹالہ کے استعفیٰ کے بعد ریاستی اسمبلی میں اراکین اسمبلی کی کل تعداد 88 ہو گئی ہے۔ اس اعداد و شمار کے مطابق ریاست میں اکثریت حاصل کرنے کے لیے 45 ارکان اسمبلی کی حمایت درکار ہے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.