National

مودی کی وزارتی کونسل میں شامل نہیں ہوئی این سی پی، اجیت پوار نے کہا- ’کابینہ سے کم کچھ بھی قابل قبول نہیں!‘

79views

نئی دہلی: وزیر اعظم نریندر مودی نے عہدہ اور رازداری کا حلف اٹھا لیا ہے اور ان کے ساتھ 71 وزرا نے بھی حلف اٹھا لیا۔ اجیت دھڑے کی این سی پی سے کوئی وزیر وزارتی کونسل میں شامل نہیں ہوا۔ این ڈی اے میں دراڑ کی خبروں کے درمیان این سی پی (اجیت پوار) نے خود کہا ہے کہ وہ فی الحال کابینہ میں شامل نہیں ہو رہی۔ این سی پی سے پرفل پٹیل کو وزیر مملکت (آزادانہ چارج) کا عہدہ دینے کی بات چل رہی تھی لیکن انہوں نے اس سے انکار کر دیا۔

بی جے پی کی حلیف پارٹیوں کے تمام بڑے لیڈروں کو وزیر کے طور پر حلف لینے کے لیے کال کی گئی۔ جن لوگوں کو کال موصول ہوئی وہ وزیر اعظم کی رہائش گاہ پر نریندر مودی سے بھی ملے۔ اسی دوران خبر آئی تھی کہ این ڈی اے کی حلیف این سی پی میں کابینہ وزیر کے عہدے کو لے کر لڑائی شروع ہو گئی ہے۔

بعد میں این سی پی نے صاف کیا کہ وہ مرکزی کابینہ میں وزیر مملکت (آزادانہ چارج) کے عہدے کے بجائے وزارتی عہدہ چاہتی ہے۔ اس بار میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے اجیت پوار نے کہا کہ ہمیں آزادانہ چارج کے ساتھ وزیر مملکت کے بارے میں معلومات ملی ہیں لیکن پرفل پٹیل خود اس سے قبل حکومت ہند کے کابینہ وزیر رہ چکے ہیں۔ ہمیں خوشی ہے کہ انہوں نے ہمیں اطلاع دی لیکن ان کے لیے یہ عہدہ سنبھالنا قدرے مشکل ہے۔ جو قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں وہ غلط ہیں، ہم میں کوئی اختلاف نہیں ہے۔‘‘

وہیں، این سی پی لیڈر پرفل پٹیل نے بھی کہا، ’’اتحاد میں کوئی اختلاف نہیں ہے۔ مجھے آزادانہ چارج کے ساتھ وزیر مملکت کے عہدے کے لیے اطلاعات موصول ہوئی ہیں لیکن میں پہلے ہی کابینہ میں وزیر تھا، اس لیے میں نے یہ عہدہ قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ اس حوالے سے اتحاد میں کوئی اختلاف نہیں ہے۔‘‘

مہاراشٹر کے نائب وزیر اعلی اور این سی پی کے سربراہ اجیت پوار کا کہنا ہے، ’’ہم نے ان (بی جے پی) سے کہا کہ ہم اس کے لیے کچھ دن انتظار کریں لیکن ہمیں کابینہ کی وزارت چاہیے۔ ہم آج حلف برداری کی تقریب میں شرکت کرنے جا رہے ہیں۔‘‘ انہوں نے مزید کہا، ’’آج ہمارے پاس ایک لوک سبھا اور ایک راجیہ سبھا ممبر ہے، لیکن اگلے 2-3 ماہ میں ہمارے پاس کل 3 ممبران ہوں گے۔ راجیہ سبھا اور پارلیمنٹ میں ہمارے ممبران کی تعداد 4 ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں (کابینہ کی وزارت) کی نشست دی جائے۔‘‘

مہاراشٹر کے نائب وزیر اعلیٰ دیویندر فڑنویس نے کہا کہ، ہم این سی پی کو وزیر مملکت کا آزادانہ چارج دینے کے لیے تیار تھے اور پرفل پٹیل کا نام ہمارے لیے حتمی تھا، کیونکہ وہ پہلے بھی وزیر تھے۔ لیکن این سی پی کابینہ چاہتی تھی، اس لیے انہوں نے انتظار کرنے کا فیصلہ کیا اور ہمیں بتایا کہ اگلی توسیع میں آپ جب چاہیں دے سکتے ہیں، لیکن ہمیں کابینہ دیں۔

اس سے پہلے یہ خبر آئی تھی کہ این ڈی اے کی حلیف این سی پی میں کابینہ وزیر کے عہدے کو لے کر لڑائی شروع ہو گئی ہے۔ یہ انکشاف ہوا ہے کہ ایک وزارتی عہدہ این سی پی کے کھاتے میں چلا گیا ہے، جس کی وجہ سے پارٹی کے دو سینئر لیڈروں پرفل پٹیل اور سنیل تٹکرے کے درمیان اختلافات شروع ہو گئے ہیں۔ دونوں لیڈروں نے مودی حکومت میں این سی پی کو دیے جانے والے کابینی وزیر کے عہدے پر دعویٰ کیا ہے۔ ان میں سے کوئی بھی اپنے دعوے سے دستبردار ہونے کو تیار نہیں۔

Follow us on Google News