National

ہریانہ کے نئے وزیر اعلیٰ نائب سنگھ سینی آج اسمبلی میں ثابت کریں گے اکثریت

84views

ہریانہ کے نئے وزیر اعلیٰ نائب سنگھ سینی نے آج اسمبلی کا ایک روزہ خصوصی اجلاس بلایا ہے جس میں وہ اپنی حکومت کی اکثریت ثابت کریں گے۔ اس اجلاس میں اسمبلی کے نئے سپیکر کا انتخاب بھی ہو سکتا ہے۔ اگر تعداد کی بات کی جائے تو اس وقت نائب سنگھ سینی حکومت اکثریت میں ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ اس کو 48 ارکان اسمبلی کی حمایت حاصل ہے، جبکہ اکثریت کے لیے 46 ارکان کی حمایت ہونا ضروری ہے۔

واضح رہے کہ منگل (12 مارچ) کو ہریانہ میں اچانک ڈرامائی طریقے سے منوہر لال کھٹر اور ان کی پوری کابینہ نے ایک ساتھ استعفیٰ دے دیا تھا۔ جس کے بعد جے جے پی کی حمایت والی حکومت گر گئی۔ استعفیٰ دینے کے بعد بی جے پی نے دوبارہ آزاد ارکان اسمبلی کی حمایت سے حکومت بنائی۔ نائب سنگھ سینی نے ہریانہ کے وزیراعلیٰ کے طور پر حلف لیا جبکہ پانچ ارکان اسمبلی نے بھی ان کے ساتھ وزیر کے طور پر حلف لیا۔

ہریانہ اسمبلی میں کل 90 سیٹیں ہیں۔ حکومت بنانے کے لیے 46 سیٹیں درکار ہیں۔ فی الوقت بی جے پی کے پاس 41 ارکان اسمبلی ہیں، جب کہ اسے 6 آزاد ارکان کی حمایت حاصل ہے۔ اس کے علاوہ ہلوپا کے ایم ایل اے گوپال کنڈا بھی حکومت کی حمایت کر رہے ہیں۔ کانگریس کے پاس 30، آئی این ایل ڈی کے پاس 1، آزاد رکن اسمبلی بلراج کنڈو 1 اور جے جے پی کے 10 ارکان اسمبلی ہیں۔

دوسری جانب کانگریس کے راجیہ سبھا ممبر دیپندر ہڈا نے دعویٰ کیا ہے کہ بی جے پی نے ہریانہ میں جے جے پی کے ساتھ ایک سمجھوتے کے تحت اتحاد توڑا ہے۔ یہ لوک سبھا انتخابات میں کانگریس کے ووٹ چوری کرنے کی کوشش ہے۔ ہڈا نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’ایکس‘ پر کہا کہ میں نے تین ماہ قبل سرسا میں منگل کو پیش آنے والے واقعات کی پیشن گوئی کی تھی۔ میں نے ریاست کے لوگوں کو بتایا تھا کہ بی جے پی-جے جے پی کے درمیان اتحاد کو توڑنے کے لیے ایک غیر اعلان شدہ معاہدہ طے پا یا ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ اس بار بی جے پی کے اشارے پر جے جے پی اور آئی این ایل ڈی کانگریس کے ووٹوں میں نقب لگانے کی کوشش کریں گے۔ ہڈا نے یہ بھی کہا کہ ہریانہ میں جو کچھ بھی ہو رہا ہے وہ عوامی جذبات کے دباؤ میں ہو رہا ہے۔ عوام تبدیلی کے لیے اپنا ذہن بنا چکے ہیں۔ ہر طبقہ ناراض اور مایوس ہے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.