National

ملک میں مساوات کے لیے فرقہ وارانہ ہم آہنگی ضروری: سی جے آئی

116views

سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ نے کہا ہے کہ ملک میں مساوات اور ہم آہنگی کے لیے ایک دوسرے کے احترام کا احساس بہت ضروری ہے۔ وہ وزارت قانون کے زیر اہتمام بیکانیر میں ہفتہ (9 مارچ) کو ‘ہمارا آئین، ہمارا احترام’ کے عنوان سے منعقدہ پروگرام سے خطاب کر رہے تھے۔

چیف جسٹس نے اس موقع پر کہا کہ ملک میں مساوات کو برقرار رکھنے کے لیے بھائی چارے کا احساس بہت ضروری ہے۔ آئین کی روح کے مطابق ہمیں ایک دوسرے کا احترام کرنا چاہیے۔ اگر لوگ آپس میں ہی لڑیں گے تو بھلا ملک کیسے ترقی کرے گا؟” چیف جسٹس نے یہ بھی کہا کہ ’’آئین بنانے والوں نے انسانی وقار و احترام کو سب سے اعلیٰ مقام دیا ہے۔ بابا صاحب امبیڈکر نے اس بات کو یقینی بنایا تھا کہ آئین میں انصاف، آزادی اور مساوات کے ساتھ بھائی چارے کے جذبے اور فرد کے وقار کو برقرار رکھا جائے۔‘‘

مہاراجہ گنگا سنگھ یونیورسٹی کے آڈیٹوریم میں منعقدہ اس پروگرام میں سی جے آئی نے یہ بھی کہا کہ ’’جمہوریت اور آئین کے درمیان ایک تعلق ہے۔ آئین کو سمجھنے سے جمہوریت کا شعور بھی پروان چڑھتا ہے۔ آئین کو ملک کے ہر شہری تک پہنچانے کی ضرورت ہے۔ آئین کی روح کو ہر فرد تک پہنچانا ہوگا۔‘‘ چیف جسٹس نے آئین کے بارے میں مزید کہا کہ ’’آئین بنانے میں بہت سی سماجی اور سیاسی تحریکات نے اپنی حصہ داری نبھائی اور ملک کے تمام طبقات کو ذہن میں رکھتے ہوئے آئین بنایا گیا تھا۔ یہ صرف وکلاء کے لیے ایک دستاویز نہیں ہے۔‘‘ انہوں نے کہا آئین ساز اسمبلی کے 284 اراکین میں سے بیکانیر سے جسونت سنگھ بھی تھے۔ ریاست بیکانیر کے مہاراجہ گنگا سنگھ کو چیمبر آف پرنسس سے قبل چانسلر کے طور پر منتخب کیا گیا تھا، اس لیے آئین ہند کا بیکانیر سے بہت گہرا تعلق ہے۔ “

عدالتی فیصلوں کے بارے میں سی جے آئی نے کہا کہ ’’ملک کی کسی بھی عدالت میں فیصلے مقامی زبان میں ہونے چاہئیں۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ’’جب میں دہلی میں بیٹھ کر کسی وکیل یا جج کے لیے کوئی فیصلہ کر رہا ہوں تو وہ کسی خاص زبان میں ہو سکتا ہے لیکن اگر میں عام آدمی کے لیے کوئی فیصلہ کر رہا ہوں تو اسے آسان زبان میں ہونا چاہیے۔‘‘

چیف جسٹس نے بیکانیر میں ای-کورٹ کی سہولت شروع کرنے کا بھی اعلان کیا اور کہا کہ یہاں کے وکلاء اب اپنے شہر سے ہی پریکٹس کر سکیں گے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ “ملک کی سپریم کورٹ دہلی کے تلک مارگ پر واقع ہے لیکن یہ تلک مارگ کی سپریم کورٹ نہیں ہے، یہ ہندوستان کی سپریم کورٹ ہے۔ اسی طرح راجستھان ہائی کورٹ بھی صرف جے پور یا جودھپور کی نہیں بلکہ یہ پورے راجستھان کی ہے۔‘‘ قبل ازیں وزیر قانون ارجن رام میگھوال نے بتایا کہ چیمبر آف پرنسس کے چانسلر کی حیثیت سے مہاراجہ گنگا سنگھ اسی جگہ بیٹھا کرتے تھے جہاں شروع میں ملک کے چیف جسٹس بیٹھا کرتے تھے۔

Follow us on Google News
Jadeed Bharat
www.jadeedbharat.com – The site publishes reliable news from around the world to the public, the website presents timely news on politics, views, commentary, campus, business, sports, entertainment, technology and world news.