جديد بهارت

Jadeed Bharat

No. 1 Urdu Daily Newspaper of Jharkhand

E Paper

ePaper

دنیا


امریکہ اور جنوبی کوریا سے مذاکرات نہیں کریں گے: شمالی کوریا

Sat, 18 Nov 2017

امریکہ اور جنوبی کوریا سے مذاکرات نہیں کریں گے: شمالی کوریا

شمالی کوریا نے کہا ہے کہ وہ امریکہ اور جنوبی کوریا سے اپنے جوہری ہتھیاروں کے پروگرام پر اس وقت تک مذاکرات نہیں کرے گا جب تک یہ دونوں اپنی مشترکہ فوجی مشقیں کرنے کا سلسلہ جاری رکھیں گے۔ اقوام متحدہ کے لیے شمالی کوریا کے سفیر ہان تائی سونگ نے جمعہ کو بین الاقوامی خبر رساں ایجنسی 'روئٹرز' کو جنیوا میں بتایا کہ "یہ دفاع ہے، امریکہ سے جوہری خطرے سے جوہری دفاع۔" ان کا مزید کہنا تھا کہ "مستقل فوجی مشقیں ہو رہی ہیں جن میں جوہری اثاثوں کے ساتھ ساتھ طیارہ بردار جہازاور اسٹریٹیجک بمبار طیارے استعامل کیے جا رہے ہیں۔۔۔ایسی مشقیں میرے ملک کے خلاف ہو رہی ہیں۔" گزشتہ ہفتے امریکہ اور جنوبی کوریا نے چار روزہ مشترکہ بحری مشقیں شروع کی تھیں جسے جنوبی کوریا کی افواج نے شمالی کوریا کے لیے ایک واضح انتباہ قرار دیا تھا۔ لیکن واشنگٹن میں محکمہ خارجہ کے حکام کا موقف رہا ہے کہ ایشیائی اتحادیوں کے ساتھ مشترکہ فوجی مشقیں "جائز، دیرینہ اور دفاعی نوعیت" کی ہیں اور اس کے برعکس شمالی کوریا کا "جوہری اور بیلسٹک میزائل پروگرام غیر قانونی" ہے۔ سیول کے فوجی عہدیداروں نے گزشتہ ہفتے ایک بیان میں کہا تھا کہ مشترکہ مشقیں شمالی کوریا کی اشتعال انگیزیوں کے خلاف "عسکری طور پر چوکس رہنے کے مضبوط عزم کا اظہار ہے۔" دریں اثناء امریکہ اور جاپان کی بحری فورسز نے جمعرات کو اوکیناوا کے سمندری علاقوں میں اپنی سالانہ باہمی فوجی تربیتی مشقوں کا بھی آغاز کر دیا ہے۔ امریکہ کہ چکا ہے کہ شمالی کوریا کے جوہری اور میزائل پروگرام کے باعث پیدا ہونے والی کشیدگی کو بات چیت کے ذریعے حل کیا جانا چاہیے لیکن وہ معاملے سے نمٹنے کے لیے ہر طرح کا اقدام کرنے کے لیے بھی تیار ہے۔


حریری کی پیرس آمد متوقع، ہفتے کو مکخواں سے ملاقات کریں گے

Sat, 18 Nov 2017

حریری کی پیرس آمد متوقع، ہفتے کو مکخواں سے ملاقات کریں گے

مکخواں جمعے کو سویڈن سے واپس پیرس پہنچے۔ اُن کا کہنا تھا کہ حریری کا خیرمقدم لبنان کے ’’وزیر اعظم‘‘ کے طور پر کیا جائے گا، چونکہ اُن کا ملک اُن کے استعفے کو تسلیم نہیں کرتا


یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی کی مہم میں روسی مداخلت

Sat, 18 Nov 2017

 یورپی یونین سے برطانیہ کی علیحدگی کی مہم میں روسی مداخلت

یہ نئے شواہد ایسے میں سامنے آئے ہیں کہ جب برطانیہ کا الیکٹورل کمشن اور قانون سازوں کی ایک کمیٹی علیحدہ علیحدہ چھان بین شروع کر چکے ہیں۔


امریکی میڈیا اداروں کو روس میں غیرملکی ایجنٹ قرار دیے جانے کا امکان

Fri, 17 Nov 2017

امریکی میڈیا اداروں کو روس میں غیرملکی ایجنٹ قرار دیے جانے کا امکان

روس نے جمعرات کے روز کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے کریملین کی سرپرستی میں چلنے والے ٹیلی وژن سٹیشن آرٹی کا  اندراج  غیرملکی ایجنٹ کے طور پر کرنے کے بیان کے رد عمل میں  اس نے امریکی حکومت کے فنڈز سے چلنے والی خبروں سے متعلق 9 گروپس کو خبردار کیا ہے کہ ان کی حکومت بھی ایسا ہی  اقدام کر سکتی ہے۔ روس کی وزارت انصاف نے جمعرات کے روز کہا کہ اس نے وائس آف امریکہ، ریڈیو فری یورپ، ریڈیو لیبرٹی اور روس میں کام کرنے والے سات علاقائی میڈیا گروپ اس کارروائی سے متاثر ہو سکتے ہیں۔ وزارت نے اپنی ویب سائٹ پر ان اداروں کی فہرست کے ساتھ ایک بیان بھی شائع کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ یہ تبدیلی مستقبل میں قانون کا درجہ حاصل کر سکتی ہے۔ روسی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں نے بدھ کے روز2012 کے قانون میں ایک ترمیم کی منظوری دی جس کا ہدف غیر سرکاری تنظیمیں اور غیر ملکی میڈیا ہے۔   اس قانون کے تحت غیر ملکی ایجنٹ قرار دیا جانے والا میڈیا گروپ، اپنے مقاصد، ماليات کی مکمل تفصیلات، مالی وسائل اور سٹاف کے متعلق باقاعدگی سے معلومات فراہم کرنے کا پابند ہوگا۔ میڈیا گروپس پر یہ بھی پابندی ہوگی کہ وہ اپنے سماجی پلیٹ فورموں اور روس میں نظر آنے والی ویب سائٹ پر یہ لکھنے کا پابند ہو گا کہ وہ غیر ملکی ایجنٹ ہے۔  آئینی ترمیم میں کریملین کو یہ اجازت بھی دی گئی ہے کہ وہ جب بھی ضروری سمجھے، عدالت سے اجازت حاصل کیے بغیر ویب سائٹس کو بلاک کر سکے گا۔ وائس آف امریکہ کی ڈائریکٹر  ایمنڈا بینٹ نے کہا ہے کہ فی الحال ہم یہ نہیں بتا سکتے کہ ان احکامات کا روس کے اندر خبریں حاصل کرنے کی ہماری کوششوں پر کیا اثر پڑے گا۔  ہم صرف یہ کہہ سکتے ہیں کہ وائس آف امریکہ ، قانونی طور پر ایک آزاد، غیر متعصب اور حقائق پر انحصار کرنے والا  میڈیا ادارہ ہے اور ہم اپنے ان اصولوں پر بدستور چلنے کا عزم رکھتے ہیں۔


میدانِ جنگ میں شکست کے باوجود، انٹرنیٹ پر داعش کا وجود باقی

Thu, 16 Nov 2017

میدانِ جنگ میں شکست کے باوجود، انٹرنیٹ پر داعش کا وجود باقی

دہشت گردی کے انسداد کے ایک ماہر نے پیر کے روز بتایا کہ ’’اِس وقت ویب پر ہمیں ایک بڑا مسئلہ درپیش ہے۔ وہ یہ کہ یہ بہت ہی آسان ہو گیا ہے کہ یکے بعد دیگرے، انٹرنیٹ پر شائع کی جانے والی لاکھوں وڈیوز تک رسائی آسان ہوتی جا رہی ہے؛ جن کا مقصد انتہا پسندی کی طرف راغب کرنا ہے‘‘


’افغانستان میں طالبان اور داعش کے مقاصد میں کوئی فرق نہیں‘

Thu, 16 Nov 2017

’افغانستان میں طالبان اور داعش کے مقاصد میں کوئی فرق نہیں‘

ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ نے کہا ہے کہ ’’پاکستان میں دہشت گردوں کی محفوظ پناہ گاہیں موجود ہیں اور یہ دو طرفہ تعلقات کے حوالے سے ایک اہم مسئلہ ہے‘‘۔ تاہم، اُنہوں نے پاکستان کے ساتھ دو طرفہ مذاکرات سے متعلق سوال کا جواب دینے سے گریز کیا۔


کرہِ ارض کے رقبے جتنی نئی دنیا دریافت، جہاں سال 10 دِن کے برابر

Thu, 16 Nov 2017

کرہِ ارض کے رقبے جتنی نئی دنیا دریافت، جہاں سال 10 دِن کے برابر

ماہرین کہتے ہیں کہ یہ خبر اُن لوگوں کے لیے حوصلے کی باعث ہوگی جو خارج الارض قریبی زندگی کے متلاشی ہیں۔ یہ سیارہ خود ساختہ ’رہائش کے قابل علاقے‘ کی سرحد پر واقع ہے


موغادیشو: الشباب کے خلاف امریکی فضائی کارروائی

Thu, 16 Nov 2017

موغادیشو: الشباب کے خلاف امریکی فضائی کارروائی

صومالی حکام نے کہا ہے کہ انتہاپسند گروپ کے خلاف جاری کارروائی کے نتیجے میں الشباب کے خلاف بڑی سطح کی کارروائی کے لیے راہ ہموار ہوتی ہے


بلوچستان پاکستان کا حصہ ہے اور رہے گا، برطانوی ہائی کمشنر

Wed, 15 Nov 2017

بلوچستان پاکستان کا حصہ ہے اور رہے گا، برطانوی ہائی کمشنر

چند روز قبل دفتر خارجہ نے برطانوی ہائی کمشنر تھامس ڈریو کو طلب کرکے لندن میں ٹیکسی کیبز پر پاکستان مخالف نعرے آویزاں کرنے پر شديد تحفظات کا اظہار کیا تھا۔


زمبابوے: رابرٹ موگابے ’’اپنے گھر تک محدود‘‘

Wed, 15 Nov 2017

زمبابوے: رابرٹ موگابے ’’اپنے گھر تک محدود‘‘

اب رابرٹ موگابے کی قسمت غیر یقینی بن چکی ہے۔ وہ 37 برس اقتدار میں رہے ہیں، اور یوں لگتا ہے کہ اُن کو ہٹانے کی کوشش کے پیچھے فوج کا ہاتھ ہے


پیرس: معروف مسلمان مذہبی اسکالر پر جنسی زیادتی کا الزام

Wed, 15 Nov 2017

پیرس: معروف مسلمان مذہبی اسکالر پر جنسی زیادتی کا الزام

پچپن برس کے رمضان نے فرانسیسی بولنے والے ملکوں اور سیکولر یورپ میں بیشمار نوجوانوں کو اسلام اور شہریت کی تعلیم دی۔ بہت سارے مذہبی علما کے برعکس وہ اجلاسوں اور محافلِ مذاکرہ میں عربی نہیں بلکہ فرانسیسی زبان میں خطاب کیا کرتے تھے، جہاں بیشمار لوگ اُنھیں سننے کے متمنی رہتے تھے


جہادی عناصر کا ترکی کا رُخ، سکیورٹی فورسز نے پکڑ دھکڑ تیز کردی

Tue, 14 Nov 2017

جہادی عناصر کا ترکی کا رُخ، سکیورٹی فورسز نے پکڑ دھکڑ تیز کردی

اس امکان کے پیشِ نظر کہ ہزاروں مزید لڑاکے شام سے ترکی پہنچ جائیں گے، خطرے سے نمٹنے کے لیے، سلامتی افواج انسداد کے اقدام کر رہی ہیں، جس کے لیے گذشتہ چند ہفتوں کے دوران سینکڑوں گرفتاریاں عمل میں لائی گئی ہیں


روہنگیا مسلمانوں پر کوئی ظلم نہیں کیا: برمی فوج

Tue, 14 Nov 2017

روہنگیا مسلمانوں پر کوئی ظلم نہیں کیا: برمی فوج

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ برمی فوج نے روہنگیا جنگجووں کے خلاف صرف چھوٹے ہتھیار استعمال کیے اور فوجیوں کی جانب سے "طاقت کے بے محابا استعمال" کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔


یورپی یونین کے وزرا نے تاریخی دفاعی سمجھوتے پر دستخط کردیے

Mon, 13 Nov 2017

یورپی یونین کے وزرا نے تاریخی دفاعی سمجھوتے پر دستخط کردیے

اس میں عہد کیا گیا ہے کہ یورپی یونین کے فوجی مشنز کے لیے رکن ممالک اہل کار، آلات، تربیت اور زیریں ڈھانچے کی فراہمی کے ضمن میں ’’قابل ذکر مدد‘‘ دیں


منیلا میں مودی ٹرمپ ملاقات، باہمی امور پر تبادلہ خیال

Mon, 13 Nov 2017

منیلا میں مودی ٹرمپ ملاقات، باہمی امور پر تبادلہ خیال

امریکہ اسٹریٹیجک اہمیت کے انڈو پیسفک خطے میں، جہاں چین اپنی فوجی موجودگی بڑھا رہا ہے، بھارت اور امریکہ کے مابین وسیع تر تعاون پر زور دے رہا ہے۔


ایران عراق سرحد پر شدید زلزلہ، 61 افراد ہلاک

Mon, 13 Nov 2017

ایران عراق سرحد پر شدید زلزلہ، 61 افراد ہلاک

ایرانی سرحد پر اتوار کی رات آنے والا یہ 7.3 شدت کا زلزلہ حلبجہ کے مشرقی عراقی کردستان کے شہر کے باہر آیا۔ اس کے جھٹکے ترکی اور اسرائیل تک محسوس کیے گئے۔


ترکی نے روسی میزائل ڈیفنس سسٹم خرید لیا

Sun, 12 Nov 2017

ترکی نے روسی میزائل ڈیفنس سسٹم خرید لیا

ترکی نیٹو کا رکن ہے اور نیٹو کے کچھ رکن ممالک روس سے S-400 میزائل خریدنے سے متعلق ترکی کے ارادے کو نیٹو کیلئے تشویش ناک قرار دے رہے ہیں۔


ویتنام کے ساتھ دو طرفہ تجارت سود مند ہوگی: ٹرمپ

Sun, 12 Nov 2017

ویتنام کے ساتھ دو طرفہ تجارت سود مند ہوگی: ٹرمپ

امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ وہ ویتنام کے ساتھ دو طرفہ تجارت کے خواہاں ہیں جو کہ دونوں ملکوں کے لیے سودمند ہو گی۔ اتوار کو ہنوئی میں ویتنام کے صدر ٹران ڈئی کوانگ سے ملاقات کے بعد ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں ٹرمپ نے کہا کہ "تجارت کو کامیاب بنانے کے لیے تمام ممالک کو قواعد میں رہ کر کام کرنا ہوگا۔ میرے لیے یہ حوصلہ افزا بات ہے کہ ویتنام حالیہ برسوں میں امریکہ کے لیے تیزی بڑھتی ہوئی برآمدی منڈی بنا ہے۔" انھوں نے اپنے ویتنامی ہم منصب کو اپنے ہاں اقتصادی اصلاحات، تجارت اور سرمایہ کاری کے فروغ کے لیے کی جانے والی کوششوں پر سراہا۔ امریکی صدر نے مزید بتایا کہ "ہم نے ابھی ویتنام میں امریکی مصنوعات کے بارے میں زبردست تبادلہ خیال کیا۔ میں پراعتماد ہوں کہ امریکی توانائی، زراعت، مالی شعبہ، ہوابازی اور دفاعی مصنوعات آپ کی بہت سی ضروریات کو پورا کرنے کے قابل ہیں۔ نہ صرف قابل بلکہ یہ کسی سے بھی بہتر ہیں۔" مترجم کی مدد سے بات کرتے ہوئے کوانگ سے ٹرمپ سے اپنی ملاقات کو سودمند قرار دیا اور کہا کہ " صدر کا ویتنام کا یہ دورہ دونوں ملکوں کے تعلقات میں ایک سنگ میل ہے۔" دونوں راہنماؤں نے شمالی کوریا اور جنوبی بحیرہ چین سے متعلق بھی تبادلہ خیال کیا۔ ٹرمپ نے شمالی کوریا کے لیے اپنے انتباہ کو دہراتے ہوئے کہا کہ یہ ملک خطے میں امن و استحکام کے لیے ایک بڑا خطرہ ہے۔ "جیسا کہ میں نے جمہوریہ کوریا کی قومی اسمبلی سے خطاب میں کہا تھا کہ تمام ذمہ دار ریاستیں اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کام کریں کہ شمالی کوریا کی  باغی ریاست کو دنیا کو ناقابل فہم جانی نقصانات کی دھمکیاں دینے سے روکا جائے۔۔۔ہم استحکام چاہتے ہیں نہ کہ افراتفری اور ہم امن چاہتے ہیں نہ کہ جنگ۔" اس سے قبل اتوار کو ہی ٹرمپ نے شمالی کوریا کے راہنما کم جونگ اُن کی طرف سے ان پر کی گئی تنقید کا جواب بھی دیا۔ کم نے انھیں ایک ایسا بوڑھا کہا تھا جو اپنی ذہنی صلاحیت کھو رہا ہوتا ہے۔ ٹوئٹر پر ٹرمپ نے کہا کہ "کم مجھے بوڑھا کہہ کر کیوں برا بھلا کہیں گے جب کہ میں نے انھیں کبھی چھوٹا اور موٹا نہیں کہا۔ میں نے ان سے دوستی کی بہت کوشش کی اور شاید کسی دن ایسا ہو بھی جائے۔" پریس کانفرنس میں جب ٹرمپ سے پوچھا گیا کہ کیا ایسا ممکن ہے کہ دونوں دوست بن جائیں تو صدر کا کہنا تھا کہ "میرا خیال ہے کہ کچھ بھی ممکن ہے۔ زندگی میں بہت سے حیران کن چیزیں ہوتی ہیں۔"


امریکہ روس معاہدے سے شام میں بہت سی زندگیاں بچ جائیں گی، ٹرمپ

Sun, 12 Nov 2017

امریکہ روس معاہدے سے شام میں بہت سی زندگیاں بچ جائیں گی، ٹرمپ

صدر ٹرمپ نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ کانفرنس کے دوران میری پوٹن کئی بار بات چیت ہوئی ۔ہم نے محسوس کیا کہ ایک دوسرے کے بارے میں ہمارے خیالات مثبت ہیں۔ اگرچہ ہم ایک دوسرے کو اچھی طرح نہیں جانتے تھے لیکن ہمارے درمیان اچھا رابطہ تھا۔


بنگلہ دیش میں پناہ گزین روہنگیا کو توجہ کی اشد ضرورت

Sat, 11 Nov 2017

بنگلہ دیش میں پناہ گزین روہنگیا کو توجہ کی اشد ضرورت

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ 25 اگست سے میانمار سے 611000 سے زائد روہنگیا پناہ گزین بنگلہ دیش پہنچے ہیں۔ ایک تازہ سروے میں بتایا گیا کہ پانچ لاکھ سے زائد پناہ گزین ایسے ہیں جنہیں بنیادی ضروریات کی اشد ضرورت ہے۔ اقوام متحدہ کے ادارہ برائے پناہ گزین نے کوٹوپالونگ کیمپ یہ سروے کیا جو کہ کوکس بازار کے گردونواح میں ان پناہ گزینون کے لیے قائم کیا گیا ہے اور اس کا اہتمام ادارے نے بنگلہ دیش کے امداد اور وطن واپسی کمیشن کے اشتراک سے کیا۔ یو این ایچ سی آر کا کہنا تھا کہ اس مقصد کے لیے ایک سو سے زائد افراد کو ہر پناہ گاہ میں جا کر ایک لاکھ 20 ہزار سے زائد خاندانوں سے معلومات جمع کرنے کے لیے مقرر کیا گیا تھا۔ ادارے کی ترجمان دنیا اسلم خان کا کہنا ہے کہ پہلے پہل میانمار سے بنگلہ دیش پہنچنے والے روہنگیاؤں میں زیادہ تر خواتین اور بچے شامل ہیں۔ انھوں  نے وائس آف امریکہ سے گفتگو میں بتایا اقوام متحدہ نے اس سروے کا فیصلہ اس بنا پر کیا تا کہ ان لوگوں کو درپیش اصل مشکلات اور ان کے کی اشد ضروریات کا پتا چلایا جا سکے۔ "ابھی تک جو اعدادوشمار جمع کیے گئے ہیں ان کے مطابق کئی ایسے خاندان ہیں جن کی سربراہی خاتون کر رہی ہیں اور اسے مرد کی حمایت حاصل نہیں۔ ایسے بچے ہیں جو اپنے اہل خانہ کی دیکھ بھال پر مجبور ہیں۔ ایسے کئی بزرگ شہری ہیں جنہیں کسی بھی طرح اپنے نوجوان اہل خانہ کی مدد حاصل نہیں کیونکہ یا تو وہ مارے جا چکے ہیں یا بچھڑ چکے ہیں۔" دنیا اسلم خان نے بتایا کہ بہت سے لوگ مختلف اقسام کی معذوری کا شکار ہیں جب کہ بہت سے بچے اپنے خاندانوں سے بچھڑ چکے ہیں۔ ان کے بقول ان تمام افراد کو زندگی بچانے والی خصوصی معاونت درکار ہے۔