جديد بهارت

Jadeed Bharat

No. 1 Urdu Daily Newspaper of Jharkhand

E Paper

ePaper

عالم و فاضل کے امتحانات یونیورسٹی سے کرائے جانے کا فیصلہ تاریخی طلباء میں خوشی کی لہر، کئی تنظیموں نے فیصلے کا خیر مقدم کیا

25 Nov 2017


آل جھارکھنڈ مدرسہ ٹیچرس ایسو سی ایشن نے فیصلے کا خیر مقدم کیا 

آل جھارکھنڈ مدرسہ ٹیچرس ایسوسی ایشن کے سکریٹری نشرواشاعت محمد حماد قاسمی کی اطلاع کی مطابق آل جھارکھنڈ مدرسہ ٹیچرس ایسوسی ایشن کے صدر سید فضل الہدیٰ، جنرل سکریٹری حامد غازی، سکریٹری نشرواشاعت مولانا حماد قاسمی اور سرپرست شرف الدین رشیدی، مدرسہ اسلامیہ رانچی کے پرنسپل مولانا محمد رضوان قاسمی نے آئندہ سیشن سے عالم وفاضل درجات کے امتحانات رانچی یونیورسٹی سے کرائے جانے کے سرکار کے فیصلے پر خوشی کا اظہار کیا ہے۔ مذکورہ ذمہ داران تنظیم نے ریاستی حکومت کے اس فیصلے کو تاریخی فیصلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ مدارس کے طلباء کی عالمیت و فضیلت کی اسناد کی افادیت کے پیش نظر ہم شروع سے ہی عالم و فاضل درجات کے امتحانات کسی یونیورسٹی کے ذریعہ منعقد کرائے جانے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں۔ بالآخر ہمارا یہ دیرانہ مطالبہ رگھوور حکومت کے عہد میں پورا ہوا۔ اس مطالبہ کو تکمیل کے مرحلے تک پہونچانے میں وزیر تعلیم ڈاکٹر نیر یادو،ہائر ایجوکیشن ڈائریکٹر (آئی اے ایس) ابو عمران اور ریاستی اقلیتی کمیشن کے چیئرمین محمد کمال خان کا بہت اہم اور سرگرم رول رہا ۔ بلکہ اگریہ کہا جائے کہ مذکورہ تینوں آخرالذکر اشخاص اس معاملے میں دلچسپی نہ لیتے تو شاید یہ مسئلہ تکمیل کے مرحلے کو نہیں پہونچتا۔ ہم عالم اور فاضل درجات کے امتحانات آئندہ سیشن سے رانچی یونیورسٹی سے کرائے جانے کے تاریخی فیصلے پر وزیر اعلیٰ رگھوورداس، وزیر تعلیم ڈاکٹر نیرا یادو،ہائر ایجوکیشن ڈائریکٹر ابو عمران اور اقلیتی کمیشن کے چیئرمین محمد کمال خان کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتے ہیں اور انہیں مبارکباد دیتے ہیں۔  

 فیصلہ تاریخی :مولانارضوان قاسمی

مدرسہ اسلامیہ کے پرنسپل محمد رضوان قاسمی نے عالم اور فاضل کے امتحان یونیورسٹی سے منعقد کرائے جانے فیصلے کو تاریخی قرار دیتے ہوئے کہا کہ عالم اور فاضل کے اسناد یونیورسٹی سطح سے طالب علموں کو ملنے سے ان اسناد کی اہمیت مزید اضافہ ہو جائےگا۔ انہوں نے کہا کہ عالم اور فاضل کے امتحان جیک سے منعقد ہونے کے سبب دیگر ریاستوں میں ان اسناد کو تسلیم نہیں کیا جاتا تھا۔ انہوں نے ریاستی حکومت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے اس فیصلے کیلئے وزیر تعلیم ڈاکٹر نیرا یادو، ہائر ایجوکیشن کے ڈائریکٹر ابو عمران اور دیگر متعلقہ افسران کو مبارکباد دی ہے۔ مبارکباد دینے والوں میں مدرسہ اساتذہ میں ماسٹر محمد ارشاد، مولانا شجاع الحق، مولانا حبیب اللہ ندوی سمیت دیگر شامل ہیں۔ 

جھارکھنڈ چھاتر سنگھ نے فیصلےکو سراہا

 اعلی تعلیم ڈائریکٹوریٹ  کے ذریعہ موجودہ تعلیمی سیشن میں عالم وفاضل کا امتحان جیک کو منعقد کرنے کی حکم دیتے ہوئے، اعلی تعلیم ڈائریکٹر نے  آئندہ تعلیمی سیشن سے عالم فاضل کے امتحان رانچی یونیورسٹی کو منعقد کرنے کیلئے اتھارائزڈ کرتے ہوئے ملک کے ممتاز یونیورسٹیوں کے نصاب کو ذہن میں رکھتے ہوئے کورس تیار کرنے، یو جی سی گائڈلائن کی روشنی میں امتحان کا انعقاد، ریگولیشن کی تعمیر سے متعلق پہلوؤں پر ضروری کارروائی کرنے کا حکم دیئے جانے پر جھارکھنڈ چھاتر سنگھ اور آمیا کے صدر ایس علی نے وزیر تعلیم ڈاکٹر نیرا یادو، اعلی تعلیم سیکرٹری اجے کمار، اعلی تعلیم ڈائریکٹر ابو عمران کا شکریہ ادا کرتے ہوئے  کہا  کہ سال 2011 سے ہم لوگ عالم اور فاضل کے امتحان رانچی یونیورسٹی سے کروانے کو لے کر مظاہرہ کر رہے تھے، یہی نہیں جیک  کے ذریعہ اس سال امتحان لینے سے انکار کرنے پر مہم بھی چلائی گئی تھی