جديد بهارت

Jadeed Bharat

No. 1 Urdu Daily Newspaper of Jharkhand

E Paper

ePaper

کانٹاٹولی فلائی اوور کے لئے حصول اراضی کی ہو رہی سخت مخالفت

25 May 2018



جدید بھارت نیوز سروسرانچی، 24؍مئی: کانٹا ٹولی فلائی اوور تعمیر کے لئے انتظامیہ کے ذریعہ کی جا رہی تحویل اراضی زوردار مخالفت شروع ہو گئی ہے۔ جمعرات کو ضلع انتظامیہ، جڈکو کمپنی اور نگر نگم کی ٹیم حصول اراضی والے زمین سے قبضہ ہٹانے کے لئے سڑک پر اتری۔ بہو بازار چوک کے پاس سے زمین پر بنے ڈھانچے کو توڑنے کا کام شروع کیا گیا، لیکن عین وقت پر سابق میئر رما کھلکھو سمیت کافی تعداد میں خواتین روڈ پر اتر آئیں۔کافی تعداد میں پولیس فورس تعینات:ان تمام خواتین نے قبضہ ہٹانے کی مخالفت میں انتظامیہ اور کمپنی کے خلاف انہوں نے انسانی گھیرا بنا کر سخت احتجاجی مظاہرہ کیا۔اس دوران رانچی کی سابق میئر نے کہا کہ ترقی کے نام پر لوگوں کو زبردستی اجاڑا جا رہا ہے۔ انتظامیہ نے رعتیوں کو ابھی تک نہیں بتایا ہے کہ ان کی کتنی زمین لی جا رہی ہے اور انہیں اس کے بدلے کتنا معاوضہ دیا جائے گا۔ 2-3 دن قبل لوگوں کو نوٹس بھیجا جا رہا ہے اورعمارتوں کو توڑنے کا کام بھی شروع کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس معاملے میں ڈی سی سے بات کی گئی تھی لیکن انہوں نے بھی معاملے کو ٹال دیا۔ انتظامیہ کا یہی رویہ رہا تو کسی بھی صورت میں زمین لینے نہیں دیں گے۔ مخالفت کو دیکھتے ہوئے ضلع انتظامیہ کی جانب سے 100 سے زائد پولیس فورس 50 سے زائد خواتین بٹالین کو موقع پر تعینات کر دیا گیا ہے۔کل بھی سخت مخالفت کی گئی تھی: واضح رہے کہ کانٹاٹولی فلائی اوور تعمیر کے لئے زمین پر قبضہ کرنے گئی  جڈکو کمپنی کے عہدیداروں کو بدھ کو بھی لوگوں کی زبردست مخالفت کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ کچھ خواتین نے تو جڈکو کے انجینئر اور مودی پروجیکٹ کے ملازمین کو اینٹ پتھر مار کر بھگا دیا۔ اگرچہ پولیس کے مورچہ سنبھالنے پر تنازعہ کی صورتحال میں تھوڑی نرمی تھی۔ جبکہ جڈکو کی ٹیم نے اب صرف روڈ چوڑا کے لئے چھوڑی گئی زمین پر ہی قبضہ کرناشروع کیا ہے۔ حاصل زمین پر قبضہ کرنے کا کام 24 مئی سے شروع ہونا ہے۔